Sang-E-Marmar Ki Khunuk Bahon Mein

شاعرہ:پروین شاکر نظم سنگ مرمر کی خنک بانہوں میںحسن خوابیدہ کے آگے مری آنکھیں شل ہیں گنگ صدیوں کے تناظر میں کوئی بولتا ہےوقت جذبےمزید پڑھیں

So Ab Ye Shart-E-Hayat Thahri

شاعرہ: پروین شاکر نظم سو اب یہ شرط حیات ٹھہریکہ شہر کے سب نجیب افراداپنے اپنے لہو کی حرمت سے منحرف ہو کے جینا سیکھیںمزید پڑھیں

Apni Hi Sada Sunun Kahan Tak

شاعرہ:پروین شاکر غزل اپنی ہی صدا سنوں کہاں تکجنگل کی ہوا رہوں کہاں تک ہر بار ہوا نہ ہوگی در پرہر بار مگر اٹھوں کہاںمزید پڑھیں