Sang-E-Marmar Ki Khunuk Bahon Mein

نظم
سنگ مرمر کی خنک بانہوں میں
حسن خوابیدہ کے آگے مری آنکھیں شل ہیں

گنگ صدیوں کے تناظر میں کوئی بولتا ہے
وقت جذبے کے ترازو پہ زر و سیم و جواہر کی تڑپ تولتا ہے

ہر نئے چاند پہ پتھر وہی سچ کہتے ہیں
اسی لمحے سے دمک اٹھتے میں ان کے چہرے
جس کی لو عمر گئے اک دل شب زاد کو مہتاب بنا آئی تھی

اسی مہتاب کی اک نرم کرن
سانچۂ سنگ میں ڈھل پائی تو
عشق رنگ ابدیت سے سرافراز ہوا
کیا عجب نیند ہے
جس کو چھو کر
جو بھی آتا ہے کھلی آنکھ لیے آتا ہے

سو چ کے خواب ابد دیکھنے والے کب کے
اور زمانہ ہے کہ اس خواب کی تعبیر لیے جاگ رہا ہے اب تک

Nazam
Sang-E-Marmar Ki Khunuk Bahon Mein
Husn-e-khwabida ke aage meri aankhen shal hain

Gung sadiyon ke tanazur mein koi bolta hai
Waqt jazbe ke tarazu pe zar-o-sim-o-jawahir ki tadap taulta hai!

Har nae chand pe patthar wahi sach kahte hain
Usi lamhe se damak uthte mein un ke chehre
Jis ki lau umr gae ek dil-e-shab-zad ko mahtab bana aai thi!

Usi mahtab ki ek narm kiran
Sancha-e-sang mein dhal pai to
ishq rang-e-abdiyat se sar-afraaz hua
Kya ajab nind hai
Jis ko chhu kar
Jo bhi aata hai khuli aankh liye aata hai

So chuke khawab-e-abad dekhne wale kab ke
Aur zamana hai ki us khawab ki tabir liye jag raha hai ab tak

اپنا تبصرہ بھیجیں