Tum Nay Hi Unsy Milna Hota Hai

غزل
تم نے ہی اُن سے ملنا ہوتا ہے
جن لوگوں سے میرا جھگڑا ہوتا ہے

اُس کے گاؤں کی ایک نشانی یہ بھی ہے
ہر نلکے کا پانی میٹھا ہوتا ہے

میں اُس شخص سے تھوڑا آگے چلتا ہوں
جس کا میں نے پیچھا کرنا ہوتا ہے

بس ہلکی سی ٹھوکر مارنی پڑتی ہے
ہر پتھر کے اندر چشمہ ہوتا ہے

کتنے سوکھے پیڑ بچا سکتے ہیں ہم
ہر جنگل میں لکڑہارا ہوتا ہے
Ghazal
Tum Nay Hi Unsy Milna Hota Hai
Jin logo sy mera jaghra hota hai

Us ky gaon ki aik nishani yeh bhi hai
Har nalkay ka pani meetha hota hai

Main us shakhs sy thora agay chalta hun
Jis ka main nay peecha krna hota hai

Bas halki si thokar marni parti hai
Har pathar ky andar chashma hota hai

Kitny sokhay paidh bacha sakty hain hum
Har jungle main lakar-hara hota hai

اپنا تبصرہ بھیجیں