Kab Yaad Mein Tera Sath Nahin Kab Hat

کب یاد میں تیرا ساتھ نہیں کب ہاتھ میں تیرا ہاتھ نہیں
صد شکر کہ اپنی راتوں میں اب ہجر کی کوئی رات نہیں
مشکل ہیں اگر حالات وہاں دل بیچ آئیں جاں دے آئیں
دل والو کوچۂ جاناں میں کیا ایسے بھی حالات نہیں
جس دھج سے کوئی مقتل میں گیا وہ شان سلامت رہتی ہے
یہ جان تو آنی جانی ہے اس جاں کی تو کوئی بات نہیں
میدان وفا دربار نہیں یاں نام و نسب کی پوچھ کہاں
عاشق تو کسی کا نام نہیں کچھ عشق کسی کی ذات نہیں
گر بازی عشق کی بازی ہے جو چاہو لگا دو ڈر کیسا
گر جیت گئے تو کیا کہنا ہارے بھی تو بازی مات نہیں
kab yaad mein tera sath nahin kab hat mein tera hat nahin
sad-shukr ki apni raaton mein ab hijr ki koi raat nahin

 

mushkil hain agar haalat wahan dil bech aaen jaan de aaen
dil walo kucha-e-jaanan mein kya aise bhi haalat nahin

 

jis dhaj se koi maqtal mein gaya wo shan salamat rahti hai
ye jaan to aani jaani hai is jaan ki to koi baat nahin

 

maidan-e-wafa darbar nahin yan nam-o-nasab ki puchh kahan
aashiq to kisi ka nam nahin kuchh ishq kisi ki zat nahin

 

gar bazi ishq ki bazi hai jo chaho laga do dar kaisa
gar jit gae to kya kahna haare bhi to bazi mat nahin

 

اپنا تبصرہ بھیجیں