Tarash Kar Mere Bazu Udan Chhod Gaya

غزل
تراش کر مرے بازو اڑان چھوڑ گیا
ہوا کے پاس برہنہ کمان چھوڑ گیا
 
رفاقتوں کا مری اس کو دھیان کتنا تھا
زمین لے لی مگر آسمان چھوڑ گیا
 
عجیب شخص تھا بارش کا رنگ دیکھ کے بھی
کھلے دریچے پہ اک پھول دان چھوڑ گیا
 
جو بادلوں سے بھی مجھ کو چھپائے رکھتا تھا
بڑھی ہے دھوپ تو بے سائبان چھوڑ گیا
 
نکل گیا کہیں ان دیکھے پانیوں کی طرف
زمیں کے نام کھلا بادبان چھوڑ گیا
 
عقاب کو تھی غرض فاختہ پکڑنے سے
جو گر گئی تو یوں ہی نیم جان چھوڑ گیا
 
نہ جانے کون سا آسیب دل میں بستا ہے
کہ جو بھی ٹھہرا وہ آخر مکان چھوڑ گیا
 
عقب میں گہرا سمندر ہے سامنے جنگل
کس انتہا پہ مرا مہربان چھوڑ گیا
Ghazal
Tarash Kar Mere Bazu Udan Chhod Gaya
Hawa ke pas barahna kaman chhod gaya
 
Rafaqaton ka meri us ko dhyan kitna tha
Zamin le li magar aasman chhod gaya
 
Ajib shakhs tha barish ka rang dekh ke bhi
Khule dariche pe ek pul-dan chhod gaya
 
Jo baadalon se bhi mujh ko chhupae rakhta tha
Badhi hai dhup to be-saeban chhod gaya
 
Nikal gaya kahin an-dekhe paniyon ki taraf
Zamin ke nam khula baadban chhod gaya
 
Uqab ko thi gharaz fakhta pakadne se
Jo gir gai to yunhi nim-jaan chhod gaya
 
Na jaane kaun sa aaseb dil mein basta hai
Ki jo bhi thahra wo aakhir makan chhod gaya
 
Aqab mein gahra samundar hai samne jangal
Kis intiha pe mera mehrban chhod gaya

اپنا تبصرہ بھیجیں