Tere Saath Guzre Dinon Ki Koi| Tehzeeb hafi Poetry

Tere Saath Guzre Dinon Ki Koi| Tehzeeb hafi Poetry

Tere Saath Guzre Dinon Ki Koi Aik Dhundli Si Tasveer
Jab bhi kabhi samne aaye gi

Tou hamein aik duaa thamne aaye gi
Burhape ki gehraiyon mein utarte howay

Teri be laos bahon ki ghere nahi bhol payenge hum
Hum ko tere tawassul se hanste hoye jo mile thay

Woh chehre nahi bhol payen gay hum
Tere pehlo mein laite howon ka ajab karb hai

Jo tujhe raat bhar apni weran aankhon se takte thay
Aur tere shadaab shanon par sar rakh ke 
Marne ki khwahish mein jeete rahe

Har tere lams ka un ko koi ishara muyassar nahi tha
Magar iss jahan ka koi ik hissa unhen tere bistar se behtar nahi tha

Par mohabbat ko iss sab se koi alaqa nahi
Aik dukh to bahar hal hum apne seenon mein le kar maren gay
Keh hum ne mohabbat ke daway kiye magar
 Tere mathe mein sindoor tanka nahi

Iss se kya farq parta hai
Hum door hain tujhe se ya paas hain
Hum koi aadmi tou nahi

Hum tou ehsas hain
Jo rahe tou hamesha rahen gay

Aur gaye tou kabhi morr ke wapas nahi aayen gay hafi
Tere saath guzre dinon ki koi aik dhundli si tasveer
Jab bhi kabhi samne aaye gi
نظم
تیرے ساتھ گزرے دنوں کی کوئی ایک دھندلی سی تصویر
جب بھی کبھی سامنے آئے گی

تو ہمیں ایک دعا تھامنے آئے گی
بڑھاپے کی گہرائیوں میں اترتے ہوئے

تیری بے لوث بانہوں کے گھیرے نہیں بھول پائیں گے ہم
ہم کو تیرے توصل سے ہنستے ہوئے جو ملے تھے

وہ چہرے نہیں بھول پائیں گے ہم
تیرے پہلو میں لیٹے ہوؤں کا عجب کرب ہے

جو تجھے رات بھر اپنی ویران آنکھوں سے تکتے تھے
اور تیرے شاداب شانوں پر سر رکھ کے مرنے کی خواہش میں جیتے رہے

ہر تیرے لمس کا ان کو کوئی اشارہ میسر نہیں تھا
مگر اس جہاں کا کوئی اک حصہ انہیں تیرے بستر سے بہتر نہیں تھا

پر محبت کو اس سب سے کوئی علا قہ نہیں
ایک دکھ تو بہر حال ہم اپنے سینوں میں لے کر مریں گے
کہ ہم نے محبت کے دعوے کئے مگر تیرے ماتھے میں سندور ٹانکا نہیں

اس سے کیا فرق پڑتا ہے
ہم دور ہیں تجھ سے یا پاس ہیں

ہم کوئی آدمی تو نہیں
ہم تو احساس ہیں
جو رہے تو ہمیشہ رہیں گے
اور گئے تو کبھی مڑ کے واپس نہیں آئیں گے حافی

اپنا تبصرہ بھیجیں