Tum Bhul gay shayad

 تم بھول گئے شاید
وہ جو دودھ شہد کی کھیر تھی
وہ جو نرم مثل حریر تھی
وہ جو آملے کا اچار تھا
تمہیں یاد ہو کہ نہ یاد ہو
جو ہرن کے سیخ کباب تھے
وہ جواب اپنا جواب تھے
وہ جو کوئٹہ کا انار تھا
وہ جو ہم میں تم میں قرار تھا
تمہیں یاد ہو کہ نہ یاد ہو
وہ جو سیب زینت باغ تھے
وہ جو شاخ شاخ چراغ تھے
وہ جو آلوؤں کو بخار تھا
وہ جو ہم میں تم میں قرار تھا
تمہیں یاد ہو کہ نہ یاد ہو
وہ رقیب کے جو بغیر تھی
وہ جو چاند رات کی سیر تھی
وہ جو عہد فصل بہار تھا
وہ جو ہم میں تم میں قرار تھا
مجھے سب ہے یاد ذرا ذرا
تمہیں یاد ہو کہ نہ یاد ہو
Tum Bhul gay shayad

wo jo dudh shahd ki khir thi
wo jo narm misl-e-harir thi

wo jo aamle ka achaar tha
tumhein yaad ho ki na yaad ho

jo hiran ke sikh-kabab the
wo jawab apna jawab the

wo jo Quetta ka anar tha
wo jo hum mein tum mein qarar tha

tumhein yaad ho ki na yaad ho
wo jo seb zinat-e-bagh the

wo jo shakh shakh charagh the
wo jo aaluon ko bukhar tha

wo jo hum mein tum mein qarar tha
tumhein yaad ho ki na yaad ho

wo raqib ke jo baghair thi
wo jo chand raat ki sair thi

wo jo ahd-e-fasl-e-bahaar tha
wo jo hum mein tum mein qarar tha

mujhe sab hai yaad zara zara
tumhein yaad ho ki na yaad ho

اپنا تبصرہ بھیجیں