Koi Raat Mery Ashna Mujhy Yun Bhi To Naseeb Ho

غزل
کوئی رات میرے آشنا مجھے یوں بھی تو نصیب ہو
نہ خیال ہو لباس کا, وہ اتنا میرے قریب ہو

بدن کی گرم آنچ سے میری آرزو کو آگ دے
میرا جوش بھی بہک اٹھے, میرا حال بھی عجیب ہو

تیرے چاشنی وجود کا میں سارا رس نچوڑ لوں
پھر تو ہی میرا مرض ہو پھر تو ہی میرا طبیب ہو۔

Ghazal
Koi Raat Mery Ashna Mujhy Yun Bhi To Naseeb Ho
Na khayal ho libas ka, wo itna mery qareeb ho

Badan ki garam aanch sy meri arzoo ko aag day
Mera josh bhi behak uthay , mera hall bhi ajib ho

Teray chashni wajood ka main sara rass nechor lon
Phir tu hi mera marz ho phir tu hi mera tabib ho

اپنا تبصرہ بھیجیں