Umed-O-Bem Ke Mehwar Se Hat Ke

Umed-O-Bem Ke Mehwar Se Hat Ke

Umed-O-Bem Ke Mehwar Se Hat Ke Dekhte Hain
Zara si dair ko duniya se hat ke dekhte hain

Bikhar chuke hain bahut bagh-o-dasht-o-dariya mein
Ab apne hujra-e-jaan mein simat ke dekhte hain
 
Tamam khanabadoshon mein mushtariq hai yeh baat 
Sab apne apne gharon ko palat ke dekhte hain

Phir es ke bad jo hona hai ho rahe sar dast
Basaat afiyat jaan ulat ke dekhte hain

Wohi hai khowab jise mil ke sab ne dekha tha
Ab apne apne qabilon mein bat ke dekhte hain

Suna ye hai keh sabk ho chali hai qeemat-e-harf
So ham bhi ab qadr-o-qamat se ghat ke dekhte hain

Umed-o-bem ke mehwar se hat ke dekhte hain
Zara si dair ko duniya se hat ke dekhte hain
غزل
امید وبیم کے محور سے ہٹ کے دیکھتے ہیں
ذرا سی دیر کو دنیا سے کٹ کے دیکھتے ہیں

بکھر چکے ہیں بہت باغ و دشت و دریا میں
اب اپنے حجرہ جاں میں سمٹ کے دیکھتے ہیں

تمام خانہ بدوشوں میں مشترک ہے یہ بات
سب اپنے اپنے گھروں کو پلٹ کے دیکھتے ہیں

پھر اس کے بعد جو ہونا ہے ہو رہے سردست
بساط عافیت جاں الٹ کے دیکھتے ہیں

وہی ہے خواب جسے مل کے سب نے دیکھا تھا
اب اپنے اپنے قبیلوں میں بٹ کے دیکھتے ہیں

سنا یہ ہے کہ سبک ہو چلی ہے قیمت حرف
سوہم بھی اب قدر وقامت سے گھٹ کے دیکھتے ہیں

امید وبیم کے محور سے ہٹ کے دیکھتے ہیں
ذرا سی دیر کو دنیا سے کٹ کے دیکھتے ہیں

اپنا تبصرہ بھیجیں