Ojhal Sahi Nigah Se Doba Nahi Hun Mein

Ojhal Sahi Nigah Se Doba Nahi Hun Mein

Ojhal Sahi Nigah Se Doba Nahi Hun Mein
Aye raat hoshiyar keh hara nahi hun mein

Mujhko frishta hone ka dawa nahi magar
Jitna bura samjhte ho itna nahi hun mein

Es tarha phair phair ke baatin na kijiye
Lehje ka rukh samjhta hun bacha nahi hun mein

Mumkin nahi hai mujh se tarz-e-munafqt
Dunya tere mizaj ka banda nahi hun mein

Dil ko gawara kar ke likha jo bhi kuch likha
Kagaz ka pait bharne ko likhta nahi hun mein

Ojhal sahi nigah se doba nahi hun mein
Aye raat hoshiyar keh hara nahi hun mein
غزل
اوجھل سہی نگاہ سے ڈوبا نہیں ہوں میں
آئے رات ہوشیار کہ ہارا نہیں ہوں میں

مجھکو فرشتہ ہونے کا دعوہ نہیں مگر
جتنا بُرا سمجھتے ہو اتنا نہیں ہوں میں

اسطرح پھیر پھیر کے باتیں نہ کیجئے
لہجے کا رُک سمجھتا ہوں بچہ نہیں ہوں میں

ممکن نہیں ہے مجھ سے یہ طرز منافقت
دنیا تیرے مزاج کا بندہ نہیں ہوں میں

دل کو گواہ کر کے لکھا جو بھی کچھ لکھا
کاغذ کا پیٹ بھرنے کو لکھتا نہیں ہوں میں

اوجھل سہی نگاہ سے ڈوبا نہیں ہوں میں
آئے رات ہوشیار کہ ہارا نہیں ہوں میں

اپنا تبصرہ بھیجیں