Mein Khwahishon Ke Azaab Le Kar Chala

Mein Khwahishon Ke Azaab Le Kar Chala

Mein Khwahishon Ke Azaab Le Kar Chala Gaya Hoon
Woh dil woh khana kharab le kar chala gaya hoon

Mein chhor kar apni rah takti udas aankhen
Jo bach gaye thay woh khwab le kar chala gaya hoon

Jis pe mein ne mohabbaton ki wahi likhi thi
Woh aik mamnooa kitaab le kar chala gaya hoon

Bas ik ujal ko suna gaya hoon jo dastaan thi
Mein zindagi se hisaab le kar chala gaya hoon

Mein qaflun ko dikha gaya hoon nishan-e-manzil
Mein raston ke sarab le kar chal gaya hoon

Unhein kaho keh mein dhoondne se nahi milon ga
Mein gird-e-rah ki niqab le kar chala gaya hoon

Mein khwahishon ke azaab le kar chala gaya hoon
Woh dil woh khana kharab le kar chala gaya hoon
غزل
میں خواہشوں کے عذاب لے کر چلا گیا ہوں
وہ دل وہ خانہ خراب لے کر چلا گیا ہوں

میں چھوڑ کر اپنی راہ تکتی اُداس آنکھیں
جو بچ گئے تھے وہ خواب لے کر چلا گیا ہوں

جس پے میں نے محبتوں کی وحی لکھی تھی
وہ ایک ممنوع کتاب لے کر چلا گیا ہوں

بس اِک اُجل کو سنا گیا ہوں جو داستان تھی
میں زندگی سے حساب لے کر چلا گیا ہوں

میں قافلوں کو دکھا گیا ہوں نشانِ منزل
میں راستوں کے سراب لے کر چل گیا ہوں

اُنھیں کہو کہ میں ڈھونڈنے سے نہیں ملوں گا
میں گردِ راہ کی نقاب لے کر چلا گیا ہوں

میں خواہشوں کے عذاب لے کر چلا گیا ہوں
وہ دل وہ خانہ خراب لے کر چلا گیا ہوں

اپنا تبصرہ بھیجیں