Jab Tera Hukm Mila Tark Mohabbat Kar Di

غزل
جب ترا حکم ملا ترک محبت کر دی
دل مگر اس پہ وہ دھڑکا کہ قیامت کر دی
 
تجھ سے کس طرح میں اظہار تمنا کرتا
لفظ سوجھا تو معانی نے بغاوت کر دی
 
میں تو سمجھا تھا کہ لوٹ آتے ہیں جانے والے
تو نے جا کر تو جدائی مری قسمت کر دی
 
تجھ کو پوجا ہے کہ اصنام پرستی کی ہے
میں نے وحدت کے مفاہیم کی کثرت کر دی
 
مجھ کو دشمن کے ارادوں پہ بھی پیار آتا ہے
تری الفت نے محبت مری عادت کر دی
 
پوچھ بیٹھا ہوں میں تجھ سے ترے کوچے کا پتہ
تیرے حالات نے کیسی تری صورت کر دی
 
کیا ترا جسم ترے حسن کی حدت میں جلا
راکھ کس نے تری سونے کی سی رنگت کر دی
Ghazal
Jab Tera Hukm Mila Tark Mohabbat Kar Di
Dil magar is pe wo dhaDka ki qayamat kar di

Tujh se kis tarah main izhaar-e-tamanna karta
Lafz sujha to muani ne baghawat kar di

Main to samjha tha ki lauT aate hain jaane wale
Tu ne ja kar to judai meri qismat kar di

Tujh ko puja hai ki asnam-parasti ki hai
Main ne wahdat ke mafahim ki kasrat kar di

Mujh ko dushman ke iradon pe bhi pyar aata hai
Teri ulfat ne mohabbat meri aadat kar di

Puchh baiTha hun main tujh se tere kuche ka pata
Tere haalat ne kaisi teri surat kar di

Kya tera jism tere husn ki hiddat mein jala
Rakh kis ne teri sone ki si rangat kar di

اپنا تبصرہ بھیجیں