Jab Raat Ki Nagin Dasti Hai

نظم
جب رات کی ناگن ڈستی ہے
نس نس میں زہر اترتا ہے

جب چاند کی کرنیں تیزی سے
اس دل کو چیر کے آتی ہیں

جب آنکھ کے اندر ہی آنسو
سب جذبوں پر چھا جاتے ہو

تب یاد بہت تم آتے ہو
جب درد کی جھانجر بجتی ہے

جب رقص غموں کا ہوتا ہے
خوابوں کی تال پہ سارے دکھ

وحشت کے ساز بجاتے ہیں
گاتے ہیں خواہش کی لے میں

مستی میں جھومتے جاتے ہیں
سب جذبوں پر چھا جاتے ہو
تب یاد بہت تم آتے ہو
NAZAM
Jab Raat Ki Nagin Dasti Hai
Nas nas mein zahr utarta hai

Jab chand ki kirne tezi se
Us dil ko chir ke aati hain

Jab aankh ke andar hi aansu
Sab jazbon par chha jate ho

Tab yaad bahut tum aate ho
Jab dard ki jhanjhar bajti hai

Jab raqs ghamon ka hota hai
Khwabon ki tal pe sare dukh

Wahshat ke saz bajate hain
Gate hain khwahish ki lai mein

Masti mein jhumte jate hain
Sab jazbon par chha jate ho
Tab yaad bahut tum aate ho

اپنا تبصرہ بھیجیں