Saqiya Ek Nazar Jam Se Pahle Pahle

ساقیا ایک نظر جام سے پہلے پہلے
ہم کو جانا ہے کہیں شام سے پہلے پہلے
نو گرفتار وفا سعی رہائی ہے عبث
ہم بھی الجھے تھے بہت دام سے پہلے پہلے
خوش ہو اے دل کہ محبت تو نبھا دی تو نے
لوگ اجڑ جاتے ہیں انجام سے پہلے پہلے
اب ترے ذکر پہ ہم بات بدل دیتے ہیں
کتنی رغبت تھی ترے نام سے پہلے پہلے
سامنے عمر پڑی ہے شب تنہائی کی
وہ مجھے چھوڑ گیا شام سے پہلے پہلے
کتنا اچھا تھا کہ ہم بھی جیا کرتے تھے فرازؔ
غیر معروف سے گمنام سے پہلے پہلے
saqiya ek nazar jam se pahle pahle
hum ko jaana hai kahin sham se pahle pahle

nau giraftar-e-wafa sai-e-rihai hai abas
hum bhi uljhe the bahut dam se pahle pahle

khush ho ai dil ki mohabbat to nibha di tu ne
log ujad jate hain anjam se pahle pahle

ab tere zikr pe hum baat badal dete hain
kitni raghbat thi tere nam se pahle pahle

samne umr paDi hai shab-e-tanhai ki
wo mujhe chhod gaya sham se pahle pahle

kitna achchha tha ki hum bhi jiya karte the ‘faraaz’
ghair maruf se gumnam se pahle pahle

اپنا تبصرہ بھیجیں