Darnay Kay Leya Hai Na Nasiihat kay Leya Hai

Ghazal
Darnay Ke Liye Hai Na Nasiihat ke Liye Hai
Jis umar main tum ho wo muhabbat ke liye hai
 
Yeh pyar tumhian es Liye shoba nahi deta
Tu jhoot hai aur jhoot siasat ke liye hai
 
Paisy say agar ho tou pershan na ho
Yeh burj bana hi kisi hairat ke liye hai
 
Yeh dil jo abhi pechle janazay nahi bhoola
Teyar abhi aik aur musibat ke liye hai
 
Darnay ke liye hai na nasiihat ke liye hai
Jis umar main tum ho wo muhabbat ke liye hai
غزل
ڈرنے کے لیے ہے نہ نصیحت کے لیے ہے
جس عمر میں تم ہو وہ محبت کے لیے ہے
 
یہ پیار تمہیں اس لیے شعبہ نہیں دیتا
توجھوٹ ہے اور جھوٹ سیاست کے لیے ہے
 
پیسے سے اگر ہو تو پریشان نہ ہونا
یہ برج بنا ہی کسی حیرت کے لیے ہے
 
یہ دل جو ابھی پچھلے جنازے نہیں بھولا
تیار ابھی اک اور مصیبت کے لیے ہے 
 
ڈرنے کے لیے ہے نہ نصیحت کے لیے ہے
جس عمر میں تم ہو وہ محبت کے لیے ہےe

اپنا تبصرہ بھیجیں