Usi Nay Dushmano Ko Ba-Khabar Rakha Howa Hai

غزل
اُسی نے دشمنوں کو با خبر رکھا ہوا ہے
تو نے جس کو اپنا کہہ کے گھر رکھا ہوا ہے

میں پاگل تو نہیں جو اُس سے میں تنخواہ مانگو
یہی کافی ہے کہ اُس نے کام پے رکھا ہوا ہے

میرے کاندھے پے سر رہنے نہیں دے گا کسی دن
یہی جس نے میرے کاندھے پر سر رکھا ہوا ہے

یہ میں نے کب کہا کہ میرے حق میں فیصلہ کرے
اگر وہ مجھ سے خوش نہیں ہے تو مجھے جدا کرے

میں اُس کے ساتھ جس طرح گزارتا ہوں زندگی
اُسے تو چاہیے میرا شکریہ ادا کرے

بنا چکا ہوں میں محبتوں کے درد کی دوا
اگر کسی کو چاہیے تو مجھ سے رابطہ کرے

میری دعا ہے اور اک طرح سے بد دعا بھی ہے
خدا تمیہں تمہارے جیسی بیٹیاں عطا کرے
 
Ghazal
Usi Nay Dushmano Ko Ba-Khabar Rakha Howa Hai
to nay jis ko ko apna kheh ky ghar rakha howa hai

main pagal tu nahi hun jo us say tankhah mango
yahi kafi hai keh us nay kaam pay rakha howa hai

meray kandhay pay sar rehnay nahi day ga kise din
yahi jis nay meray kandhay per sar rakha howa hai

yeh main ny kab kaha keh meray haq main fasla kary
agar wo mujh say khush nahi hai tu juda kary

main jis tarha guzarta hun zindagi
usay tu chahiye mera shukaria ada kary

bana chuka hun main mohabbto ky dard ki dawa
agar kisi ko chahiye tu mujh say rabta kary

meri dua hai aur ek tarha say bad dua bhi hai
khuda tumhain tumharay jise batiyaa ata kary

اپنا تبصرہ بھیجیں