Aik Tareekh Muqarrar Peh Tu Har Mah Miley

Aik Tareekh Muqarrar Peh Tu Har Mah Miley

Aik Tareekh Muqarrar Peh Tu Har Mah Miley
Jaisay daftar mein kisi shakhs ko tankhwah miley

Rang akhar jaye to zahir ho palastar ki numi
Qahqaha khoud ke dekho tu tumhein aah miley

Jama thay raat mere ghar tere thukraye hoye
Aik dargaah peh sab raandah dargaah miley

Mein to ik aam sipahi tha hifazat ke liye
Shahzadi yeh tera haq tha tujhe shah miley

Aik udaasi ke jazeeray peh hoon ashkoon mein ghira
Mein nikal jaon agar khush guzar gaah miley

Ik mulaqat ke taalnay ki khabar aisay lagi
Jaisay mazdoor ko haraal ki afwaah miley

Ghar pahunchnay ki nah jaldi nah tamanna hai koi
Jis ne milna ho mujhe aaye sar rah miley

Aik tareekh muqarrar peh tu har mah miley
Jaisay daftar mein kisi shakhs ko tankhwah miley
غزل
ایک تاریخ مقرر پہ تو ہر ماہ ملے
جیسے دفتر میں کسی شخص کو تنخواہ ملے

رنگ اکھڑ جائے تو ظاہر ہو پلستر کی نمی
قہقہہ کھود کے دیکھو تو تمہیں آہ ملے

جمع تھے رات مرے گھر ترے ٹھکرائے ہوئے
ایک درگاہ پہ سب راندہ درگاہ ملے

میں تو اک عام سپاہی تھا حفاظت کے لئے
شاہ زادی یہ ترا حق تھا تجھے شاہ ملے

ایک اُداسی کے جزیرے پہ ہوں اشکوں میں گھرا
میں نکل جاؤں اگر خشک گزر گاہ ملے

اک ملاقات کے ٹلنے کی خبر ایسے لگی
جیسے مزدور کو ہڑتال کی افواہ ملے

گھر پہنچنے کی نہ جلدی نہ تمنا ہے کوئی
جس نے ملنا ہو مجھے آئے سر راہ ملے

ایک تاریخ مقرر پہ تو ہر ماہ ملے
جیسے دفتر میں کسی شخص کو تنخواہ ملے
Poet: Umair Najmi

اپنا تبصرہ بھیجیں