Hami Bhi Na Thay Munkir-E-Ghalib Bhi Nahi Thay

Hami Bhi Na Thay Munkir-E-Ghalib Bhi Nahi Thay

Hami Bhi Na Thay Munkir-E-Ghalib Bhi Nahi Thay
Hum ahl-e-tahzb-zab kisi janib bhi nahi thay

Bech aye sar, qarya, zar, johar, pandar
Jo daam miley aise munasib bhi nahi thay
 
Mitti ki muhabbat mein hum ashufta saro ne
Wo qarz utare hain keh wajib bhi nahi thay
 
Es bar bhi duniya ne hadf hum ko banaya
Es bar ham tou sha ke musahib bhi nahi thay
 
Hami bhi na thay munkir-e-ghalib bhi nahi thay
Hum ahl-e-tahzb-zab kisi janib bhi nahi thay
غزل
حامی بھی نہ تھے منکرِ غالب بھی نہیں تھے
ہم اہلِ تذبذب کسی جانب بھی نہیں تھے
 
بیچ آئے سر قریہ، زر، جوہر، پندار
جو دام ملےایسے مناسب بھی نہیں تھے
 
مٹی کی محبت میں ہم آشفتہ سروں نے
وہ قرض اتارے ہیں کہ واجب بھی نہیں تھے
 
اس باربھی دنیا نے ہدف ہم کو بنایا
اس بارتو ہم شہ کے مصائب بھی نہیں تھے
 
حامی بھی نہ تھے منکرِ غالب بھی نہیں تھے
ہم اہلِ تذبذب کسی جانب بھی نہیں تھے
Biography clicks here

اپنا تبصرہ بھیجیں