Meri Aankhon Ke Samandar Mein Jalan Kaisi Hai

Meri Aankhon Ke Samandar Mein Jalan Kaisi Hai

Meri Aankhon Ke Samandar Mein Jalan Kaisi Hai
Aaj phir dil ko taraptne ki lagan kaisi hai

Ab kisi chhat peh chiraghun ki qataren bhi nahi
Ab tere shahr ki galiyon mein ghutan kaisi hai

Barf ke roop mein dhal jayen gay sare rishte
Mujh se pooch keh mohabbat ki agan kaisi hai

Mein tere wasal ki khwahish ko nah marne dunga
Mausam hijar ke lehje mein thakan kaisi hai

Regzaron mein jo banti rahi kantun ki rada
Uss ki majboor si aankhon mein kiran kaisi hai

Mujhe masoom si larki peh taras aata hai
Usay dekho tou mohabbat mein magan kaisi hai

Meri aankhon ke samandar mein jalan kaisi hai
Aaj phir dil ko taraptne ki lagan kaisi hai
غزل
میری آنکھوں کےسمندر میں جلن کیسی ہے
آج پھر دل کو تڑپنے کی لگن کیسی ہے

اب کسی چھت پہ چراغوں کی قطاریں بھی نہیں
اب ترے شہر کی گلیوں میں گھٹن کیسی ہے

برف کے روپ میں ڈھل جائیں گے سارے رشتے
مجھ سے پوچھو کہ محبت کی اگن کیسی ہے

میں ترے وصل کی خواہش کو نہ مرنے دوں گا
موسم ہجر کے لہجے میں تھکن کیسی ہے

ریگزاروں میں جو بنتی رہی کانٹوں کی ردا
اس کی مجبور سی آنکھوں میں کرن کیسی ہے

مجھے معصوم سی لڑکی پہ ترس آتا ہے
اُسے دیکھو تو محبت میں مگن کیسی ہے

میری آنکھوں کےسمندر میں جلن کیسی ہے
آج پھر دل کو تڑپنے کی لگن کیسی ہے

اپنا تبصرہ بھیجیں