Ho Gae Din Jinhen Bhulae Hue

غزل
ہو گئے دن جنہیں بھلائے ہوئے
آج کل ہیں وہ یاد آئے ہوئے

میں نے راتیں بہت گزاری ہیں
صرف دل کا دیا جلائے ہوئے

ایک اسی شخص کا نہیں مذکور
ہم زمانے کے ہیں ستائے ہوئے

سونے آتے ہیں لوگ بستی میں
سارے دن کے تھکے تھکائے ہوئے

مسکرائے بغیر بھی وہ ہونٹ
نظر آتے ہیں مسکرائے ہوئے

گو فلک پہ نہیں پلک پہ سہی
دو ستارے ہیں جگمگائے ہوئے

اے شعورؔ اور کوئی بات کرو
ہیں یہ قصے سنے سنائے ہوئے
Ghazal
Ho Gae Din Jinhen Bhulae Hue
Aaj kal hain wo yaad aae hue

Main ne raaten bahut guzari hain
Sirf dil ka diya jalae hue

Ek usi shakhs ka nahin mazkur
Hum zamane ke hain satae hue

Sone aate hain log basti mein
Sare din ke thake-thakae hue

Muskurae baghair bhi wo hont
Nazar aate hain muskurae hue

Go falak pe nahin palak pe sahi
Do sitare hain jagmagae hue

Ai ‘shuur’ aur koi baat karo
Hain ye qisse sune-sunae hue

اپنا تبصرہ بھیجیں