Hont Poetry

Mari Wafa Ne Khilae The Jo Gulab Sare Jhulas Gae Hain

غزل
مری وفا نے کھلائے تھے جو گلاب سارے جھلس گئے ہیں
تمہاری آنکھوں میں جس قدر تھے وہ خواب سارے جھلس گئے ہیں

مری زمیں کو کسی نئے حادثے کا ہے انتظار شاید
گناہ پھلنے لگے ہیں اجر و ثواب سارے جھلس گئے ہیں

جو تم گئے تو مری نظر پہ حقیقتوں کے عذاب اترے
یہ سوچتا ہوں کہ کیا کروں گا سراب سارے جھلس گئے ہیں

یہ معجزہ صرف ایک شب کی مسافتوں کے سبب ہوا ہے
تمہارے اور میرے درمیاں کے حجاب سارے جھلس گئے ہیں

اسے بتانا کہ اس کی یادوں کے سارے صفحے جلا چکا ہوں
کتاب دل میں رقم تھے جتنے وہ باب سارے جھلس گئے ہیں

نظر اٹھاؤں میں جس طرف بھی مہیب سائے ہیں ظلمتوں کے
یہ کیا کہ میرے نصیب کے ماہتاب سارے جھلس گئے ہیں

تمہاری نظروں کی یہ تپش ہے کہ میرے لفظوں پہ آبلے ہیں
سوال سارے جھلس گئے ہیں جواب سارے جھلس گئے ہیں

یہ آگ خاموشیوں کی کیسی تمہاری آنکھوں میں تیرتی ہے
تمہارے ہونٹوں پہ درج تھے جو نصاب سارے جھلس گئے ہیں
Ghazal
Mari Wafa Ne Khilae The Jo Gulab Sare Jhulas Gae Hain
Tumhaari aankhon mein jis qadar the wo khwab sare jhulas gae hain

Mari zamin ko kisi nae hadse ka hai intizar shayad
Gunah phalne lage hain ajr o sawab sare jhulas gae hain

Jo tum gae to meri nazar pe haqiqaton ke azab utre
Ye sochta hun ki kya karunga sarab sare jhulas gae hain

Ye moajiza sirf ek shab ki masafaton ke sabab hua hai
Tumhaare aur mere darmiyan ke hijab sare jhulas gae hain

Use batana ki us ki yaadon ke sare safhe jala chuka hun
Kitab-e-dil mein raqam the jitne wo bab sare jhulas gae hain

Nazar uthaun main jis taraf bhi muhib sae hain zulmaton ke
Ye kya ki mere nasib ke mahtab sare jhulas gae hain

Tumhaari nazron ki ye tapish hai ki mere lafzon pe aable hain
Sawal sare jhulas gae hain jawab sare jhulas gae hain

Ye aag khamoshiyon ki kaisi tumhaari aankhon mein tairti hai
Tumhaare honton pe darj the jo nisab sare jhulas gae hain

اپنا تبصرہ بھیجیں