Ye Khud Ko Dekhte Rahne Ki Hai Jo Khu Mujh Mein

غزل
یہ خود کو دیکھتے رہنے کی ہے جو خو مجھ میں
چھپا ہوا ہے کہیں وہ شگفتہ رو مجھ میں

مہ و نجوم کو تیری جبیں سے نسبت دوں
اب اس قدر بھی نہیں عادت غلو مجھ میں

تغیرات جہاں دل پہ کیا اثر کرتے
ہے تیری اب بھی وہی شکل ہو بہ ہو مجھ میں

رفوگروں نے عجب طبع آزمائی کی
رہی سرے سے نہ گنجائش رفو مجھ میں

وہ جس کے سامنے میری زباں نہیں کھلتی
اسی کے ساتھ تو ہوتی ہے گفتگو مجھ میں

خدا کرے کہ اسے دل کا راستہ مل جائے
بھٹک رہی ہے کوئی چاپ کو بہ کو مجھ میں

اس ایک زہرہ جبیں کے طفیل جاری ہے
تمام زہرہ جبینوں کی جستجو مجھ میں

نہیں پسند مجھے شعر و شاعری کرنا
کبھی کبھار بس اٹھتی ہے ایک ہو مجھ میں

میں زندگی ہوں مجھے اس قدر نہ چاہ شعورؔ
مسافرانہ اقامت گزیں ہے تو مجھ میں
Ghazal
Ye Khud Ko Dekhte Rahne Ki Hai Jo Khu Mujh Mein
Chhupa Hua Hai Kahin Wo Shagufta-Ru Mujh Mein

Mah O Nujum Ko Teri Jabin Se Nisbat Dun
Ab Is Qadar Bhi Nahi Aadat-E-Ghulu Mujh Mein

Taghayyuraat-E-Jahan Dil Pe Kya Asar Karte
Hai Teri Ab Bhi Wahi Shakl Hu-Ba-Hu Mujh Mein

Rafugaron Ne Ajab Taba-Azmai Ki
Rahi Sire Se Na Gunjaish-E-Rafu Mujh Mein

Wo Jis Ke Samne Meri Zaban Nahi Khulti
Usi Ke Sath To Hoti Hai Guftugu Mujh Mein

Khuda Kare Ki Use Dil Ka Rasta Mil Jae
Bhatak Rahi Hai Koi Chap Ku-Ba-Ku Mujh Mein

Us Ek Zohra-Jabin Ke Tufail Jari Hai
Tamam Zohra-Jabinon Ki Justuju Mujh Mein

Nahi Pasand Mujhe Sher-O-Shaeri Karna
Kabhi-Kabhaar Bas Uthti Hai Ek Hu Mujh Mein

Main Zindagi Hun Mujhe Is Qadar Na Chah ‘Shuur’
Musafirana Iqamat-Guzin Hai Tu Mujh Mein

اپنا تبصرہ بھیجیں