Haan Yeh Such Hai Keh Mohabbat Nahi Ki

Ghazal :
Haan Yeh Such Hai Keh Mohabbat Nahi Ki
Dost bas meri tabiyat nahi ki

Es liye gaon main sailaab aya
Hum nay daryaaon ki izzat nahi ki

Jism tak us ne mujhy soanp diya
Dil ne es per bhi qanaat nahi ki

Meray izaaz main rakhi ge thi
Main ne jis bazam main sherkat nahi ki

Yaad bhi yaad se rakha usko
Bhool janae main bhi ghaflat nahi ki

Us ko dekha tha ajab halat main
Phir bhi uski hifazat nahi ki

Hum agar fatah hue hain to kia
Ishq ne kis pe hakumat nahi ki
غزل
ہاں یہ سچ ہے کہ محبت نہیں کی
دوست بس میری طبیت نہیں کی

اِس لیے گاؤں میں سیلاب آیا
ہم نے دریاؤں کی عزت نہیں کی

جسم تک اُس نے مجھے سونپ دیا
دل نے اس پر بھی قناعت نہیں کی

میرے اعزاز میں رکھی گئی تھی
میں نے جس بزم میں شرکت نہیں کی

یاد بھی یاد سے رکھا اُس کو
بھول جانے میں بھی غفلت نہیں کی

اُس کو دیکھا تھا عجب حالت میں
پھر کبھی اُس کی حفاظت نہیں کی

ہم اگر فتح ہوئے ہیں تو کیا
عشق نے کس پہ حکومت نہیں کی

اپنا تبصرہ بھیجیں