Khatm Har Acha Bura Ho Jaega

غزل
ختم ہر اچھا برا ہو جائے گا
ایک دن سب کچھ فنا ہو جائے گا

کیا پتا تھا دیکھنا اس کی طرف
حادثہ اتنا بڑا ہو جائے گا

مدتوں سے بند دروازہ کوئی
دستکیں دینے سے وا ہو جائے گا

ہے ابھی تک اس کے آنے کا یقین
جیسے کوئی معجزہ ہو جائے گا

مسکرا کر دیکھ لیتے ہو مجھے
اس طرح کیا حق ادا ہو جائے گا

کاش ہو جاؤ مرے ہمراہ تم
ورنہ کوئی دوسرا ہو جائے گا

کل کا وعدہ اور اس بحران میں؟
جانے کل دنیا میں کیا ہو جائے گا

رنگ لائے گا شہیدوں کا لہو
ظلم جب حد سے سوا ہو جائے گا

آپ کا کچھ بھی نہ جائے گا شعورؔ
ہم غریبوں کا بھلا ہو جائے گا
Ghazal
Khatm Har Acha Bura Ho Jaega
Ek din sab kuchh fana ho jaega
 
Kya pata tha dekhna us ki taraf
Hadsa itna bada ho jaega
 
Muddaton se band darwaza koi
Dastaken dene se wa ho jaega
 
Hai abhi tak us ke aane ka yaqin
Jaise koi moajiza ho jaega
 
Muskura kar dekh lete ho mujhe
Is tarah kya haq ada ho jaega
 
Kash ho jao mere ham-rah tum
Warna koi dusra ho jaega
 
Kal ka wada aur is bohran mein?
Jaane kal duniya mein kya ho jaega
 
Rang laega shahidon ka lahu
Zulm jab had se siwa ho jaega
 
Aap ka kuchh bhi na jaega ‘shuur’
Hum gharibon ka bhala ho jaega

اپنا تبصرہ بھیجیں