Ishq Kab Apne Maqasid Ka Nigehbaan| Best Ghazal

Ishq Kab Apne Maqasid Ka Nigehbaan| Best Ghazal

Ishq Kab Apne Maqasid Ka Nigehbaan Nah Howa
Kon sa gham hai jo aakhir janan nah howa

Lakh chaha magar afsoos keh aanso nah thamay
Zabt-e-gham se baqadar gham penhan nah howa

Teri ishrat hai keh gurdon ke dabaye nah dabi
Mera gham hai keh hansi mein bhi numaya nah howa

Gham duniya gham uqbi gham hasti gham mout
Koi gham bhi tou hareef gham janan nah howa

Zarray zarray se yeh ilan pareshani hai
Jis ke daman se hai wabasta mera zauq hayat
Woh bhi kafir mere meyaar ka insan nah howa

Mein raha gircha har ehsas peh masroof sujood
Koi sajda bhi teri shaan ke shayan nah howa

Barf zaar zar-o-daulat ka har afsurda zameer
Zamzamun se mere kab shola badaman nah howa

Barq nakam ma-o-meher kwakab mayoz
Nah howa mere nasheman mein charaghan nah howa

Mere takhleq adab mein hai qaseeda madoom
Mujh se ehsan kisi waqt yeh aisyan nah howa

Ishq kab apne maqasid ka nigehbaan nah howa
Kon sa gham hai jo aakhir janan nah howa
غزل
عشق کب اپنے مقاصد کا نگہبان نہ ہوا
کون سا غم ہےجو آخر غم جاناں نہ ہوا

لاکھ چاہا مگر افسوس کہ آنسو نہ تھمے
ضبط غم مجھ سے بقدر غم پنہاں نہ ہوا

تیری عشرت ہے کہ گردوں کے دبائے نہ دبی
میرا غم ہے کہ ہنسی میں بھی نمایاں نہ ہوا

غم دنیا غم عقبی غم ہستی غم موت
کوئی غم بھی تو حریف غم جاناں نہ ہوا

ذرے ذرے سے یہ اعلاں پریشانی ہے
جس کے دامن سے ہے وابستہ میرا ذوق حیات
وہ بھی کافر میرے معیار کا انساں نہ ہوا

میں رہا گرچہ ہر احساس پہ مصروف سجود
کوئی سجدہ بھی تری شان کے شایاں نہ ہوا

برف زار زر و دولت کا ہر افسردہ ضمیر
زمزموں سے مرے کب شعلہ بداماں نہ ہوا

برق ناکام مہ و مہر کواکب مایوز
نہ ہوا میرے نشیمن میں چراغاں نہ ہوا

میرے تخلیق ادب میں ہے قصیدہ معدوم
مجھ سے احسان کسی وقت یہ عصیاں نہ ہوا

عشق کب اپنے مقاصد کا نگہبان نہ ہوا
کون سا غم ہےجو آخر غم جاناں نہ ہوا

اپنا تبصرہ بھیجیں