Uss Ki Taraf Bas Iss Liye Takta Nahi Tha Mein

Uss Ki Taraf Bas Iss Liye Takta Nahi Tha Mein

Uss Ki Taraf Bas Iss Liye Takta Nahi Tha Mein
Sab dekhte thay aankh jhapakta nahi tha mein

Aisi dabaiz nahh thi badan par malal ki
Jalne ke bawajood chamakta nahi tha mein

Ik atar saaz lams ne takmeel ki meri
Warna khila howa bhi mehekta nahi tha mein

Andar ki toot phoot mein tootay hain lafz bhi
Doraan-e-guftagu yun atakta nahi tha mein

Kuch kuch shaoor hijr mujhe kam suni se tha
So tehneyon se phool uchkata nahi tha mein

Girya shuru se tha pasandeeda mashgala
Ganton bhi karta rehta tu thakta nahi tha mein

Acha howa khud uski nazar mujh peh par gai
Uss ko wahan pukar to sakta nahi tha mein

Uss ki taraf bas iss liye takta nahi tha mein
Sab dekhte thay aankh jhapakta nahi tha mein
غزل
اُس کی طرف بس اِس لئے تکتا نہیں تھا میں
سب دیکھتے تھے آنکھ جھپکتا نہیں تھا میں

ایسی دبیز نہہ تھی بدن پر ملال کی
جلنے کے باوجود چمکتا نہیں تھا میں

اک عطر ساز لمس نے تکمیل کی مری
ورنہ کِھلا ہوا بھی مہکتا نہیں تھا میں

اندر کی ٹوٹ پھوٹ میں ٹوٹے ہیں لفظ بھی
دورانِ گفتگو یوں اٹکتا نہیں تھا میں

کچھ کچھ شعور ہجر مجھے کم سنی سے تھا
سو ٹہنیوں سے پھول اُچکتا نہیں تھا میں

گریہ، شروع سے تھا پسندیدہ مشغلہ
گھنٹوں بھی کرتا رہتا تو تھکتا نہیں تھا میں

اچھا ہوا خود اُس کی نظر مجھ پہ پڑ گئی
اُس کو وہاں پکار تو سکتا نہیں تھا میں

اُس کی طرف بس اِس لئے تکتا نہیں تھا میں
سب دیکھتے تھے آنکھ جھپکتا نہیں تھا میں
Poet: Umair Najmi

اپنا تبصرہ بھیجیں