Kise khabar hai ki umr bas us pe ghaur karne mein kat rahi hai

کسے خبر ہے کہ عمر بس اس پہ غور کرنے میں کٹ رہی ہے
کہ یہ اداسی ہمارے جسموں سے کس خوشی میں لپٹ رہی ہے
عجیب دکھ ہے ہم اس کے ہو کر بھی اس کو چھونے سے ڈر رہے ہیں
عجیب دکھ ہے ہمارے حصے کی آگ اوروں میں بٹ رہی ہے
میں اس کو ہر روز بس یہی ایک جھوٹ سننے کو فون کرتا
سنو یہاں کوئی مسئلہ ہے تمہاری آواز کٹ رہی ہے
مجھ ایسے پیڑوں کے سوکھنے اور سبز ہونے سے کیا کسی کو
یہ بیل شاید کسی مصیبت میں ہے جو مجھ سے لپٹ رہی ہے
یہ وقت آنے پہ اپنی اولاد اپنے اجداد بیچ دے گی
جو فوج دشمن کو اپنا سالار گروی رکھ کر پلٹ رہی ہے
سو اس تعلق میں جو غلط فہمیاں تھیں اب دور ہو رہی ہیں
رکی ہوئی گاڑیوں کے چلنے کا وقت ہے دھند چھٹ رہی ہے
Kise Khabar Hai Ki Umr Bas Us Pe Ghaur Karne Mein Kat Rahi Hai
ki ye udasi hamare jismon se kis khushi mein lipat rahi hai
 
ajib dukh hai hum us ke ho kar bhi us ko chhune se dar rahe hain
ajib dukh hai hamare hisse ki aag auron mein bat rahi hai
 
main us ko har roz bas yahi ek jhut sunne ko phone karta
suno yahan koi masala hai tumhaari aawaz kat rahi hai
 
mujh aise pedon ke sukhne aur sabz hone se kya kisi ko
ye bel shayad kisi musibat mein hai jo mujh se lipat rahi hai
 
ye waqt aane pe apni aulad apne ajdad bech degi
jo fauj dushman ko apna salar girwi rakh kar palat rahi hai
 
so is talluq mein jo ghalat-fahmiyan thin ab dur ho rahi hain
ruki hui gadiyon ke chalne ka waqt hai dhundh chhat rahi hai

اپنا تبصرہ بھیجیں