poetry

Banjara

بنجارا:
میں بنجارہ
وقت کے کتنے شہروں سے گزرا ہوں
لیکن
وقت کے اس اک  شہر سے جاتے جاتے مڑ کے دیکھ رہا ہوں
سوچ رہا ہوں
تم سے میرا یہ ناتا بھی ٹوٹ رہا ہے
تم نے مجھ کو چھوڑا تھا جس شہر میں آ کر
وقت کا اب وہ شہر بھی مجھ سے چھوٹ رہا ہے
مجھ کو وداع کرنے آئے ہیں
اس نگری کے سارے باسی
وہ سارے دن
جن کے کندھے پر سوتی ہے
اب بھی تمہاری زلف کی خوشبو
سارے لمحے
جن کے ماتھے پر روشن
اب بھی تمہارے لمس کا ٹیکا
نم آنکھوں سے
گم سم مجھ کو دیکھ رہے ہیں
مجھ کو ان کے دکھ کا پتا ہے
ان کو میرے غم کی خبر ہے
لیکن مجھ کو حکم سفر ہے
جانا ہوگا
وقت کے اگلے شہر مجھے اب جانا ہوگا
وقت کے اگلے شہر کے سارے باشندے
سب دن سب راتیں
جو تم سے ناواقف ہوں گے
وہ کب میری بات سنیں گے
مجھ سے کہیں گے
جاؤ اپنی راہ لو راہی
ہم کو کتنے کام پڑے ہیں
جو بیتی سو بیت گئی
اب وہ باتیں کیوں دہراتے ہو
کندھے پر یہ جھولی رکھے
کیوں پھرتے ہو کیا پاتے ہو
میں بے چارہ
اک بنجارہ
آوارہ پھرتے پھرتے جب تھک جاؤں گا
تنہائی کےٹیلے پر جا کر بیٹھوں گا
پھر جیسے پہچان کے مجھ کو
اک بنجارہ جان کے مجھ کو
وقت کے اگلے شہر کے سارے ننھے منے بھولے لمحے
ننگے پاؤں
دوڑے دوڑے بھاگے بھاگے آ جائیں گے
مجھ کو گھیر کے بیٹھیں گے
اور مجھ سے کہیں گے
کیوں بنجارے
تم تو وقت کے کتنے شہروں سے گزرے ہو
ان شہروں کی کوئی کہانی ہمیں سناؤ
ان سے کہوں گا
ننھے لمحو!
ایک تھی رانی
سن کے کہانی
سارے ننھے لمحے
غمگیں ہو کر مجھ سے یہ پوچھیں گے
تم کیوں ان کے شہر نہ آئیں
لیکن ان کو بہلا لوں گا
ان سے کہوں گا
یہ مت پوچھو
آنکھیں موندو
اور یہ سوچو
تم ہوتیں تو کیسا ہوتا
تم یہ کہتیں
تم وہ کہتیں
تم اس بات پہ حیراں ہوتیں
تم اس بات پہ کتنی ہنستیں
تم ہوتیں تو ایسا ہوتا
تم ہوتیں تو ویسا ہوتا
دھیرے دھیرے
میرے سارے ننھے لمحے
سو جائیں گے
اور میں
پھر ہولے سے اٹھ کر
اپنی یادوں کی جھولی کندھے پر رکھ کر
پھر چل دوں گا
وقت کے اگلے شہر کی جانب
ننھے لمحوں کو سمجھانے
بھولے لمحوں کو بہلانے
یہی کہانی پھر دہرانے
تم ہوتیں تو ایسا ہوتا
تم ہوتیں تو ویسا ہوتا
:Banjara
main banjara

waqt ke kitne shahron se guzra hun
lekin
waqt ke is ek shahr se jate jate muD ke dekh raha hun
soch raha hun
tum se mera ye nata bhi tut raha hai

tum ne mujh ko chhoda tha jis shahr mein aa kar
waqt ka ab wo shahr bhi mujh se chhut raha hai

mujh ko widaa karne aae hain
is nagri ke sare basi

wo sare din
jin ke kandhe par soti hai
ab bhi tumhaari zulf ki khushbu

sare lamhe

jin ke mathe par raushan
ab bhi tumhaare lams ka tika

nam aankhon se

gum-sum mujh ko dekh rahe hain
mujh ko in ke dukh ka pata hai

in ko mere gham ki khabar hai
lekin mujh ko hukm-e-safar hai

jaana hoga

waqt ke agle shahr mujhe ab jaana hoga
waqt ke agle shahr ke sare bashinde

sab din sab raaten

jo tum se na-waqif honge
wo kab meri baat sunenge

mujh se kahenge
jao apni rah lo rahi
hum ko kitne kaam pade hain

jo biti so bit gai
ab wo baaten kyun dohraate ho

kandhe par ye jholi rakkhe
kyun phirte ho kya pate ho

main be-chaara
ek banjara

aawara phirte phirte jab thak jaunga
tanhai ke tile par ja kar baithunga

phir jaise pahchan ke mujh ko
ek banjara jaan ke mujh ko

waqt ke agle shahr ke sare nanhe-munne bhole lamhe

nange panw
daude daude bhage bhage aa jaenge
mujh ko gher ke baithenge
aur mujh se kahenge

kyun banjare

tum to waqt ke kitne shahron se guzre ho
un shahron ki koi kahani hamein sunao

un se kahunga
nanhe lamho

ek thi rani
sun ke kahani

sare nanhe lamhe

ghamgin ho kar mujh se ye puchhenge
tum kyun in ke shahr na aain

lekin un ko bahla lunga

un se kahunga
ye mat puchho

aankhen mundo
aur ye socho

tum hotin to kaisa hota

tum ye kahtin
tum wo kahtin

tum is baat pe hairan hotin
tum us baat pe kitni hanstin

tum hotin to aisa hota
tum hotin to waisa hota

dhire dhire

mere sare nanhe lamhe

so jaenge
aur main
phir haule se uth kar

apni yaadon ki jholi kandhe par rakh kar

phir chal dunga

waqt ke agle shahr ki jaanib
nanhe lamhon ko samjhane

bhule lamhon ko bahlane
yahi kahani phir dohrane

tum hotin to aisa hota
tum hotin to waisa hota

اپنا تبصرہ بھیجیں