Hum Un Ki Nazar Main Bhi Adakar Howay Hain

Hum Un Ki Nazar Main Bhi Adakar Howay Hain

Ghazal
Hum Un Ki Nazar Main Bhi Adakar Howay Hain
Jo log hamain dekh ke fankar howay hain

Ham youn hi nahi sheikh-e-azadaar howay hain
Nasli hain tou asli ke prastaar howay hain

Yeh wo hain jinhain main ne sukhan karna sikhaya
Yeh lehje mere samne talwar howay hain

Milne tou akele hi use jana hai zaryoun
Yeh dost magar kis liye tayar howay hain

Sab aa ke mujhe kehte hain murshad koi chara
Jis jis ko dar-e-yar se inkar howay hain

Tu niend se jaga tou kahan jaye gay wo log
Jo mar ke tere khuwab main bedaar howay hain

Tohmat tou laga dete ho bhikari ki ham per
Pocho tou sahi kis liye bhikar howy hain

Hum un ki nazar main bhi adakar howay hain
Jo log hamain dekh ke fankar howay hain
 
غزل
ہم اُن کی نظر میں بھی اداکار ہوئے ہیں
جو لوگ ہمیں دیکھ کے فنکار ہوئے ہیں

ہم یوں ہی نہیں شیخِ ازادار ہوئے ہیں
نسلی ہیں تو اصلی کے پرستار ہوئے ہیں

یہ وہ ہیں جنہیں میں نے سخن کرنا سیکھایا
یہ لہجے میرے سامنے تلوار ہوئے ہیں

ملنے تو اکیلے ہی اُسے جانا ہے زریونؔ
یہ دوست مگر کس لیے تیار ہوئے ہیں

سب آکے مجھے کہتے ہیں مرشد کوئی چارہ
جس جس کو درِ یار سے انکار ہوئے ہیں

تو نیند سے جاگا تو کہاں جائیں گئے وہ لوگ
جو مر کے تیرے خواب میں بیدار ہوئے ہیں

تہمت تو لگا دیتے ہو بھکاری کی ہم پر
پوچھو تو سہی کس لیے بھکار ہوئے ہیں

ہم اُن کی نظر میں بھی اداکار ہوئے ہیں
جو لوگ ہمیں دیکھ کے فنکار ہوئے ہیں

اپنا تبصرہ بھیجیں