Tumhain Kya Ho Gaya Hai

Tumhain Kya Ho Gaya Hai

Tumhain Kya Ho Gaya Hai
Batao tu sahi a jaan-e-jaan janan-e-jaan

Akhir tumhain kya hogaya hai
Apni hi awaz se darne lagay ho apne hi saye se ghabranay lagay ho
Apne he chehre se sharmanay lagay ho
Batao tou sahi
Akhir tumhain kya hogaya hai
Chalo ham ne yeh mana yeh zamana ab tumhare bas se
Bahar hogaya
En dino mein be hissi ke mousamon mein dil ka khoon hona
Muqqadar hogaya hai
Magar es qihar maan basten mein do ankhen tou aisi hain keh jin mein
Koi andesha nahi hai aur jin ke khwaab yaksaah hain
Bahut hi mabham si tabeer ka emkaan tu hai
Yeh shab guzaray na guzaray subha par imaan tou hai
Tou phir aa jaan-e-jaan veraan kyu ho
Es qadar shadaab ankhen jab dua go hain tou
itnay be saron-o-samaan kyu ho
Batao tu sahi aa jaan-e-jaan akhir tumhain kya hogaya hai
Apne hi chehray se sharmane lagay ho
Apne hi saye se ghabranay lagay ho
Tumhain kya ho gaya hai
نظم
تمہیں کیا ہو گیا ہے
بتاؤ تو سہی اے جان جاں ! جانانِ جاں!
آخر تمہیں کیا ہو گیا ہے
اپنی ہی آواز سے ڈرنے لگے ہو اپنے ہی سائے سے گھبرانے لگے ہو
اپنے ہی چہرے سے شرمانے لگے ہو
بتاؤ تو سہی ۔۔
آ کر تمہیں کیا ہو گیا ہے
چلو ہم نے یہ مانا یہ زمانہ اب تمہارے بس سے
باہر ہو گیا ہے
ان دنوں میں بے حسی کے موسموں میں دل کا خوں ہونا
مقدر ہو گیا ہے
مگر اس قہرمان بستی میں دو آنکھیں تو ایسی ہیں کہ جن میں
کوئی اندیشہ نہیں ہے اور جن کے خواب یکساں ہیں
بہت ہی مبہم سی تعبیر کا امکان تو ہے
یہ شب گزرے نہ گزرے صبح پر ایمان تو ہے
تو پھر اے جان ِ جاں ویراں کیوں ہو
اس قدر شاداب آنکھیں جب دعا گو ہیں تو
اتنے بے سر و ساماں
کیوں ہو
بتاؤ تو سہی اے جان ِ جاں آخر تمہیں کیا ہو گیا ہے
اپنی ہی آواز سے ڈرنے لگے ہو
اپنے ہی چہرے سے شرمانے لگے ہو
اپنے ہی سائے سے گھبرانے لگے ہو
تمہیں کیا ہو گیا ہے

اپنا تبصرہ بھیجیں