Khawab Khas Khana-O-Barfab Ke Piche Piche

Khawab Khas Khana-O-Barfab Ke Piche Piche

Khawab Khas Khana-O-Barfab Ke Piche Piche
Garmi-e- shahr muqaddar ke satae howay log

Kaisi yakh basta zaminon ki taraf aanikle
Mauj-e-khon barf hoi jati hai sansen bhi hain barf

Wahshaten jin ka muqaddar theen wo aankheen bhi hain barf
Yad-e-yaran dil aawez ka manzar bhi hai barf

Aik ek naam har aawaz har ek chehra barf
Munjamad khawab ki taksaal ka har sika barf

Aur ab sochte hain sham-o-sahar sochte hain
Khawab-e-khas khana-o-barfab se wo aag bhali

Jis ke sholon mein bhi qirtas-o-qalam zinda hain
Jis mein har ahd ke har nasl ke gham zinda hain

Khaak ho kar bhi yeh lagta tha keh hum zinda hain

Khawab khas khana-o-barfab ke piche piche
Garmi-e- shahr muqaddar ke satae howay log
نظم
خواب خس خانہ و بر فاب کے پیچھے پیچھے
گرمی شہر مقدر کے ستائے ہوئے لوگ

کیسی یخ بستہ زمینوں کی طرف آنکلے
موج خوں برف ہوئی جاتی ہے سانییں بھی ہیں برف

وحشتیں جن کا مقدر تھیں وہ آنکھیں بھی ہیں برف
یاد یاران دل آویز کا منظر بھی ہے برف

ایک اک نام ہر آواز ہر اک چہرہ برف
منجمد خواب کی ٹکسال کا ہر سکہ برف

اور اب سوچتے ہیں شام و سحر سوچتے ہیں
خواب خس خانہ و برفاب سے وہ آگ بھلی

جن کے شعلوں میں بھی قرطاس و قلم زندہ ہیں
جس میں ہر عہد کے ہر نسل کے غم زندہ ہیں

خاک ہو کر بھی یہ لگتا تھا کہ ہم زندہ ہیں
خواب خس خانہ و بر فاب کے پیچھے پیچھے
گرمی شہر مقدر کے ستائے ہوئے لوگ

اپنا تبصرہ بھیجیں