Baith Jata Hai Wo Jab Mehfil Mein A Ke Samne

Baith Jata Hai Wo Jab Mehfil Mein A Ke Samne

Baith Jata Hai Wo Jab Mehfil Mein A Ke Samne
Mein hi bas hota hoon es ki es ada ke samne

Tez bhi itni keh sara sheher sona kar gai
Dair tak baitha raha mein es hawa ke samne
Raat aik ojray maqam per ja ke jab awaz di
Goonj uthay baam-o-dar meri sada ke samne
Wo rangila hath mere dil pe aur es ki mehk
Shama-e-dil bujh si gai rang-e-hina ke samne
Mein tou es ko dekhtay hi jaise pathar ho gaya
Baat tak na muh se nikali be-wafa ke samne
Yaad bhi hain eh munir es shaam ki tanhaiyan
Aik maidan mein ek darakht aur tu khuda ke samne
Baith jata hai wo jab mehfil mein a ke samne
Mein hi bas hota hoon es ki es ada ke samne
غزل
بیٹھ جاتا ہے وہ جب محفل میں آکے سامنے
میں ہی بس ہوتا ہوں اس کی اس ادا کے سامنے
تیز تھی اتنی کہ سارا شہر سونا کر گئی
دیر تک بیٹھا رہا میں اس ہوا کے سامنے
رات ایک اجڑے مقام پر جاکے جب آواز دی
گونج اٹھے بام و در میری صدا کے سامنے
وہ رنگیلا ہاتھ میرے دل پہ اور اس کی مہک
شمع دل بجھ سی گئی رنگ حنا کے سامنے
میں تو اس کو دیکھتے ہی جیسے پتھر ہوگیا
بات تک نہ منہ سے نکلی بے وفا کے سامنے
یاد بھی ہیں اے منیر اس شام کی تنہائیاں
ایک میدان میں اک درخت اور تو خدا کے سامنے
بیٹھ جاتا ہے وہ جب محفل میں آکے سامنے
میں ہی بس ہوتا ہوں اس کی اس ادا کے سامنے

اپنا تبصرہ بھیجیں