Bana Ke Saakh Bachanay Mein Umar Kat Rahi Hai

Bana Ke Saakh Bachanay Mein Umar Kat Rahi Hai

Bana Ke Saakh Bachanay Mein Umar Kat Rahi Hai
Munafiqat ke zamanay mein umar kat rahi hai

Baron ke umar kati qaraz le ke palany mein
Hamaray qaraz chukanay mein umar kat rahi hai

Peyaday barhtay hain martay hain shaakh dekhta hai
Ke uss ki aik hi khanay mein umar kat rahi hai

Zarasi baat peh kat jati hai zuban jahan
Meri aik aisi gharanay mein umar kat rahi hai

Bana ke saakh bachanay mein umar kat rahi hai
Munafiqat ke zamanay mein umar kat rahi hai
غزل
بنا کے ساکھ بچانے میں عمر کٹ رہی ہیں
منافقت کے زمانے میں عمر کٹ رہی ہیں

بڑوں کے عمر کٹی قرض لے کے پالنے میں
ہمارے قرض چکانے میں عمر کٹ رہی ہیں

پیادے بڑھتے ہیں مرتے ہیں شاخ دیکھتا ہے
کے اُس کی ایک ہی خانے میں عمر کٹ رہی ہیں

ذراسی بات پہ کٹ جاتی ہے زبان جہاں
میری ایک ایسی گھرانے میں عمر کٹ رہی ہیں

بنا کے ساکھ بچانے میں عمر کٹ رہی ہیں
منافقت کے زمانے میں عمر کٹ رہی ہیں
Poet: Umair Najmi

اپنا تبصرہ بھیجیں