Randan-E-Tishna-Kam Ko Ja Kar Khabar Karen

Randan-E-Tishna-Kam Ko Ja Kar Khabar Karen

Randan-E-Tishna-Kam Ko Ja Kar Khabar Karen
Aayi bahar abr-e-karam par nazar karen

Hoon munfail zaroor magar ae gunah-e-ishq
Ab ashk bhi nahin hain jo daman ko tar karen

Be-wajah kab hai pursish-e- hal-e-shab-e-firaaq
Maqsad ye hai izafa-e-dard-e-jigar karen

Fursat ke din hain saqi-e- maikash nawaz uth
Kiyon intizar mausam deewana-gar karen

Mujh par utha rahe hain jo mehfil mein ungliyaan
Apni haqiqatoon pe tou akhir nazar karen

kaaba mein khamoshi hai sanam khane mein sukut
Surat parast ab tere sajda kidhar karen

Uf re jamal-e-jalwa-e-janan ki tabisheen
Dekhen unhen keh matam-e-tab nazar karen

Auraaq-e-do-jahan pe bhi hoga na ikhtitaam
Ehsan sarguzasht e alam mukhtasar karen

Randan-e-tishna-kam ko ja kar ḳhabar karen
Aayi bahar abr-e-karam par nazar karen
غزل
رندان‌ تشنہ کام کو جا کر خبر کریں
آئی بہار ابر کرم پر نظر کریں

ہوں منفعل ضرور مگر اے گناہ عشق
اب اشک بھی نہیں ہیں جو دامن کو تر کریں

بے وجہ کب ہے پرسش حال شب فراق
مقصد یہ ہے اضافۂ درد جگر کریں

فرصت کے دن ہیں ساقی میکش نواز اٹھ
کیوں انتظار موسم دیوانہ گر کریں

مجھ پر اٹھا رہے ہیں جو محفل میں انگلیاں
اپنی حقیقتوں پہ تو آخر نظر کریں

کعبہ میں خاموشی ہے صنم خانے میں سکوت
صورت پرست اب ترے سجدہ کدھر کریں

اف رے جمال جلوۂ جاناں کی تابشیں
دیکھیں انہیں کہ ماتم تاب نظر کریں

اوراق دو جہاں پہ بھی ہوگا نہ اختتام
احسانؔ سرگذشت الم مختصر کریں

رندان‌ تشنہ کام کو جا کر خبر کریں
آئی بہار ابر کرم پر نظر کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں