Dukh-dard Ke Maron Se Mera Zikr Na karna

غزل
دکھ درد کے ماروں سے مرا ذکر نہ کرنا
گھر جاؤ تو یاروں سے مرا ذکر نہ کرنا

وہ ضبط نہ کر پائیں گی آنکھوں کے سمندر
تم راہ گزاروں سے مرا ذکر نہ کرنا

پھولوں کے نشیمن میں رہا ہوں میں سدا سے
دیکھو کبھی خاروں سے مرا ذکر نہ کرنا

شاید یہ اندھیرے ہی مجھے راہ دکھائیں
اب چاند ستاروں سے مرا ذکر نہ کرنا

وہ میری کہانی کو غلط رنگ نہ دے دیں
افسانہ نگاروں سے مرا ذکر نہ کرنا

شاید وہ مرے حال پہ بے ساختہ رو دیں
اس بار بہاروں سے مرا ذکر نہ کرنا

لے جائیں گے گہرائی میں تم کو بھی بہا کر
دریا کے کناروں سے مرا ذکر نہ کرنا

وہ شخص ملے تو اسے ہر بات بتانا
تم صرف اشاروں سے مرا ذکر نہ کرنا

Ghazal
Dukh-dard Ke Maron Se Mera Zikr Na karna
Ghar jao to yaron se mera zikr na karna

Wo zabt na kar paengi aankhon ke samundar
Tum rah-guzaron se mera zikr na karna

ُPhulon ke nasheman mein raha hun main sada se
Dekho kabhi kharon se mera zikr na karna

Shayad ye andhere hi mujhe rah dikhaen
Ab chand sitaron se mera zikr na karna

Wo meri kahani ko ghalat rang na de den
Afsana-nigaron se mera zikr na karna

Shayad wo mere haal pe be-sakhta ro den
Is bar bahaaron se mera zikr na karna

Le jaenge gahrai mein tum ko bhi baha kar
Dariya ke kinaron se mera zikr na karna

Wo shakhs mile to use har baat batana
Tum sirf ishaaron se mera zikr na karna

Dukh-dard Ke Maron Se Mera Zikr Na karna
Ghar jao to yaron se mera zikr na karna

اپنا تبصرہ بھیجیں