Qalam dil mein duboya ja raha hai

قلم دل میں ڈبویا جا رہا ہے
نیا منشور لکھا جا رہا ہے
میں کشتی میں اکیلا تو نہیں ہوں
مرے ہم راہ دریا جا رہا ہے
سلامی کو جھکے جاتے ہیں اشجار
ہوا کا ایک جھونکا جا رہا ہے
مسافر ہی مسافر ہر طرف ہیں
مگر ہر شخص تنہا جا رہا ہے
میں اک انساں ہوں یا سارا جہاں ہوں
بگولہ ہے کہ صحرا جا رہا ہے
ندیمؔ اب آمد آمد ہے سحر کی
ستاروں کو بجھایا جا رہا ہے
Qalam Dil Mein Duboya Ja Raha Hai
naya manshur likkha ja raha hai
 
main kashti mein akela to nahin hun
mere hamrah dariya ja raha hai
 
salami ko jhuke jate hain ashjar
hawa ka ek jhonka ja raha hai
 
musafir hi musafir har taraf hain
magar har shakhs tanha ja raha hai
 
main ek insan hun ya sara jahan hun
bagula hai ki sahra ja raha hai
 
‘nadim’ ab aamad aamad hai sahar ki
sitaron ko bujhaya ja raha hai

اپنا تبصرہ بھیجیں