Dil Ko Diwaar Karen, Sabar Se Wehshat Karen Hum

Dil Ko Diwaar Karen, Sabar Se Wehshat Karen Hum

Dil Ko Diwaar Karen, Sabar Se Wehshat Karen Hum
Khaak ho jayen jo ruswai ko shohrat karen hum

Ek qayamat keh tali baithi hai paamali par
Yeh guzar le tou bayan qad-o-qamat karen hum

Harf-e-tardeed se par sakten hain so tarha ke pech
Aise sada bhi nahi hain keh wazahat karen hum

Dil ke hamrah guzare gaye sab umer ke din
Sham ai hai tou kia tarq-e-mohabbat karen hum

Ek hamari bhi amanat hai tah-e-khaak yahaan
Kaise mumkin hai es sheher se hijrat karen hum

Din niklne ko hai chehron pe saja len dunya
Subah se pehle har ek khawab ko rukhsat karen hum

Shooq-e-araish gul ka yeh silla hai keh saba
Kehti phirti hai keh ab aur na zehmat karen hum

Umer bhi dil mein sajaye phiray auron ki Shibihah
Kabhi aisa ho keh apni bhi ziyarat karen hum

Dil ko diwaar karen, sabar se wehshat karen hum
Khaak ho jayen jo ruswai ko shohrat karen hum
غزل
دل کو دیوار کریں، صبر سے وحشت کریں ہم
خاک ہو جائیں جو رسوائی کو شہرت کریں ہم

اک قیامت کہ تلی بیٹھی ہے پامالی پر
یہ گزر لے تو بیان قد و قامت کریں ہم

حرف تردید سے پڑ سکتے ہیں سو طرح کے پیچ
ایسے سادہ بھی نہیں ہیں کہ وضاحت کریں ہم

دل کے ہمراہ گزارے گئے سب عمر کے دن
شام آئی ہے تو کیا ترک ِ محبت کریں ہم

اک ہماری بھی امانت ہے تہ خاک یہاں
کیسے ممکن ہے اس شہر سے ہجرت کریں ہم

دن نکلنے کو ہے چہروں پہ سجا لیں دنیا
صبح سے پہلے ہر اک خواب کو رخصت کریں ہم

شوق ِ آرائش گل کا یہ صلہ ہے کہ صبا
کہتی پھرتی ہے کہ اب اور نہ زحمت کریں ہم

عمر بھی دل میں سجائے پھرے اوروں کی شبیہ
کبھی ایسا ہو کہ اپنی بھی زیارت کریں ہم

دل کو دیوار کریں، صبر سے وحشت کریں ہم
خاک ہو جائیں جو رسوائی کو شہرت کریں ہم

اپنا تبصرہ بھیجیں