Koi Hassen Badan Jis Ki Dastaras Mein Nahi

Koi Hassen Badan Jis Ki Dastaras Mein Nahi

Koi Hassen Badan Jis Ki Dastaras Mein Nahi
Yahi kahin gay ke kuch faida hawas mein nahi

Qareebi logo ki fehrist mein han toi uss ki
Magar yeh dukh hai keh hum pehle aath das mein nahi

Hamein azeez hai kirdar fath se barh kar
So hum shikast to khalen gay jhooti qasmen nahi

Nahi hai farz mohabbat nah ho saki nah sahi
Woh kaam karna hi kyun hai jo apne bas mein nahi

Yeh bhool ja keh rehai kabhi mili gi tujhe
Hamaray dhayan mein rehta hai tou qufs mein nahi

Tanazzuli ka safar hum ne irtiqa ki tarah
Dahayon mein kia aik do baras mein nahi

Koi hassen badan jis ki dastaras mein nahi
Yahi kahin gay ke kuch faida hawas mein nahi
غزل
کوئی حسین بدن جس کی دسترس میں نہیں
یہی کہیں گے کہ کچھ فائدہ ہوس میں نہیں

قریبی لوگوں کی فہرست میں تو ہیں اُس کی
مگر یہ دکھ ہے کہ ہم پہلے آٹھ دس میں نہیں

ہمیں عزیز ہے کردار فتح سے بڑھ کر
سو ہم شکست تو کھا لیں گے، جھوٹی قسمیں نہیں

نہیں ہے فرض محبت نہ ہو سکی نہ سہی
وہ کام کرنا ہی کیوں ہے جو اپنے بس میں نہیں

یہ بھول جا کہ رہائی کبھی ملی گی تجھے
ہمارے دھیان میں رہتا ہے توُ قفس میں نہیں

تنزلی کا سفر ہم نے ارتقاء کی طرح
دہائیوں میں کیا۔۔ ایک، دو برس میں نہیں

کوئی حسین بدن جس کی دسترس میں نہیں
یہی کہیں گے کہ کچھ فائدہ ہوس میں نہیں

اپنا تبصرہ بھیجیں