Nazare Dekhtaa Thokar Se Thodi Door Hai Bas

Ghazal
Nazare Dekhata Thokar Se Thodi Door Hai Bas
Wo aik hadsa patthar se thori door hai bas
 
Khatib shole bayani se agay ja raha hai
Taweel khamshi minbar se thori door hai bas
 
Wo badshah faqeeron ki bargah main hai
Yeh dunyia aglay qalandar se thori door hai bas
 
Main aik khayal se azad hone wala hun
Zameen akhari chakar se thori door hai bas
 
Es aik jang ka maqsad tamam ho chuka hai
Wo rani shah ke bistar se thori door hai bas
غزل
نظارے دیکھاتا ٹھوکر سےتھوڑی دور ہےبس
وہ ایک حادثہ پتھر سےتھوڑی دور ہے بس
 
خطیب شعلہ بیانی سے آگے جا رہا ہے
طویل خامشی منبر سےتھوڑی دور ہے بس
 
وہ بادشاہ فقیروں کی بارگاہ میں ہے
یہ دنیا اگلے قلندر سےتھوڑی دور ہے بس
 
میں ایک خیال سے آزاد ہونے والا ہوں
زمین آخری چکر سے تھوڑی دور ہے بس
 
اس ایک جنگ کا مقصد تمام ہو چکا ہے
وہ رانی شاہ کے بستر سےتھوڑی دور ہے بس

اپنا تبصرہ بھیجیں