Waqt Hai Bahir Khara| Noon Meem Danish Poem

Waqt Hai Bahir Khara| Noon Meem Danish Poem

Waqt Hai Bahir Khara
Yeh kise maloom hai darwaza kholen

Kiya hamara muntazir ho
Kon saa dukh konsi rahat
Nisabon mein likhi sachai
Ya ankhon se girta ashk
Tareeki khari ho
Ya kisi tehni ka tanha phool
Aankhen sard gehri
Jin mein Kochh kholta nah ho kiya hai posheeda
Numayan kiya hai
Kis ka akas hai
Kaisi shabiha hai
Yeh samandar hai sarab
Phool hai keh dhool hai
Maadoomyat ya zindagi
Kochh bhi nah kholta ho
Faqt aankhen hoon gehri muntazir aur ik khala
Aahat kisi qadmoon ki
Aur koi nahi ho rahro
Ya phir lahoo ho
Aankh se behta lahoo
Bachon ka
Dil ka
Saibaanon ka lahoo
Zakhmi radawon
Nojawano
Raat din ka
Ya kisi ki ehtijaj cheekh ka
Chup ka
Kisi ke khwab ka
Ya phool ka
Muskurahat ho kisi lab ko tarasti
Ya keh phir taza ho
Ya sunehr dhoop
Mehbooba ho
Koi dost
Ya phir mout
Hum mein kise maloom hai darwaza kholen
Kiya hamara muntazir ho
Waqt hai bahir khara
Yeh kise maloom hai darwaza kholen
نظم
وقت ہے باہر کھڑا
یہ کسے معلوم ہے دروازہ کھولیں
کیا ہمارا متظر ہو
کون سا دکھ کونسی راحت
نصابوں میں لکھی سچائی
یا آنکھوں سے گرتا اشک
تاریکی کھڑی ہو
یا کسی ٹہنی کا تہنا پھول
آنکھیں سرد گہری
جن میں کچھ کھلتا نہ ہو کیا ہے پوشیدہ
نمایاں کیا ہے
کس کا عکس ہے
کیسی شبیہ ہے
یہ سمندر ہے سراب
پھول ہے کہ دھول ہے
معدومیت یا زندگی
کچھ بھی نہ کھلتا ہو
فقط آنکھیں ہوں گہری منتظر اور اک خلا
اہٹ کسی قدموں کی
اور کوئی نہیں ہو راہرو
یا پھر لہو ہو
آنکھ سے بہتا لہو
بچوں کا
دل کا
سائبانوں کا لہو
زخمی رداؤں
نوجوانوں
رات دن کا
یا کسی کی احتجاجی چیخ کا
چپ کا
کسی کے خواب کا
یا پھول کا
مسکراہٹ ہو کسی لب کو ترستی
یا کہ پھر تازہ ہو
یا سنہر دھوپ
محبوبہ ہو
کوئی دوست
یا پھر موت
ہم میں کسے معلوم ہے دروازہ کھولیں
کیا ہمارا منتظر ہو
وقت ہے باہر کھڑا
یہ کسے معلوم ہے دروازہ کھولیں

اپنا تبصرہ بھیجیں