Pehle Us Ki Khushbo Mein Ne Khud Per Tari Ki

Pehle Us Ki Khushbo Mein Ne Khud Per Tari Ki

Pehle Us Ki Khushbo Mein Ne Khud Per Tari Ki
Phir mein ne us phool se milne ki tayari ki

Itna dukh tha mujhe tere laut jane ka
Mein ne ghar ke darwaze se bhi moh mari ki
 
Ham jaise siah bakhto ko roshni se kia kaam
Yunhi diya jala ke raat ki dil azari ki
 
Likh leta hoon aur phir sath hi sochne lagata hon
Kon samjh pay ga in lafzon ki bariki
 
Mujhe mohabbat hai per mein es baat se darta hoon
Us tak ponch na jaye khabar meri es bimari ki
 
Pehle us ki khushbo mein ne khud per tari ki
Phir mein ne us phool se milne ki tayari ki
غزل
پہلے اُس کی خوشبو میں نے خود پر طاری کی
پھر میں نے اُُس پھول سے ملنے کی تیاری کی
 
اتنا دکھ تھا مجھے تیرے لوٹ کے جانے کا
میں نے گھر کے دروازو سے بھی منہ ماری کی
 
ہم جیسے سیاہ بختوں کو روشنی سے کیا کام
یونہی دیا جلا کے رات کی دل آزاری کی
 
لکھ لیتا ہوں اور پھر ساتھ ہی سوچنے لگتا ہوں
کون سمجھ پائے گا ان لفظوں کی باریکی
 
مجھے محبت ہے پر میں اس بات سے ڈرتا ہوں
اُس تک پہنچ نہ جائے خبر مری اس بیماری کی
 
پہلے اُس کی خوشبو میں نے خود پر طاری کی
پھر میں نے اُُس پھول سے ملنے کی تیاری ک

اپنا تبصرہ بھیجیں