Zara Si Dair Mein Andha P0ara Dikhai Diya

Zara Si Dair Mein Andha Para Dikhai Diya

Zara Si Dair Mein Andha Para Dikhai Diya
Shuru jang mein lashkar bara dikhai diya

Bas aik mein hi nahi zulmatun ki shab ke khilaaf
Mera chiragh bhi datt kar khara dikhai diya

Jahan peh dushmanon ki saf bani hoi thi mujhe
Wahen peh doston ka ik dhara dikhai diya

Mein dasht-e-ishq se yunhi hoi khaif
Kisi ka rait mein paon ghara dikhai diya

Yeh mere hasratoon ka daira khaincha howa hai
Magar kalai mein sab ko kara dikhai diya

Yahi tu aakhiri umeed tha khazaan rat mein
Jo shakh wasal se pattaa jhara dikhai diya

Faqt yeh aankh hi mayal nahi aziyat par
Faraib-e-hijar peh dil bhi ura dikhai diya

Zara sa ghour kiya aainaay mein chehre par
Badan ki qabar peh kutab jara dikhai diya

Zara si dair mein andha para dikhai diya
Shuru jang mein lashkar bara dikhai diya
غزل
ذراسی دیر میں اندھا پڑا دکھائی دیا
شروع جنگ میں لشکر بڑا دکھائی دیا

بس ایک میں ہی نہیں ظلمتوں کی شب کے خلاف
مرا چراغ بھی ڈٹ کر کھڑا دکھائی دیا

جہاں پہ دشمنوں کی صف بنی ہوئی تھی مجھے
وہیں پہ دوستوں کا اک دھڑا دکھائی دیا

میں دشتِ عشق سے یو نہی نہں ہوئی خائف
کسی کا ریت میں پاؤں گڑا دکھائی دیا

یہ میرے حسرتوں کا دائرہ کھنچا ہوا ہے
مگر کلائی میں سب کو کڑا دکھائی دیا

یہی تو آخری اُمید تھا خزاں رت میں
جو شاخ وصل سے پتہ جھڑا دکھائی دیا

فقط یہ آنکھ ہی مائل نہیں اذیت پر
فریبِ ہجر پہ دل بھی اڑا دکھائی دیا

ذرا سا غور کیا آئینے میں چہرے پر
بدن کی قبر پہ کتبہ جڑا دکھائی دیا

ذراسی دیر میں اندھا پڑا دکھائی دیا
شروع جنگ میں لشکر بڑا دکھائی دیا
Poet: Komal Joya

اپنا تبصرہ بھیجیں