Chand Roz Aur Meri Jaan

چند روز اور مری جان فقط چند ہی روز
ظلم کی چھاؤں میں دم لینے پہ مجبور ہیں ہم
 
اور کچھ دیر ستم سہہ لیں تڑپ لیں رو لیں
اپنے اجداد کی میراث ہے معذور ہیں ہم
 
جسم پر قید ہے جذبات پہ زنجیریں ہیں
فکر محبوس ہے گفتار پہ تعزیریں ہیں
 
اپنی ہمت ہے کہ ہم پھر بھی جیے جاتے ہیں
زندگی کیا کسی مفلس کی قبا ہے جس میں
 
ہر گھڑی درد کے پیوند لگے جاتے ہیں
لیکن اب ظلم کی میعاد کے دن تھوڑے ہیں
 
اک ذرا صبر کہ فریاد کے دن تھوڑے ہیں
عرصۂ دہر کی جھلسی ہوئی ویرانی میں
 
ہم کو رہنا ہے پہ یوں ہی تو نہیں رہنا ہے
اجنبی ہاتھوں کا بے نام گراں بار ستم
 
آج سہنا ہے ہمیشہ تو نہیں سہنا ہے
یہ ترے حسن سے لپٹی ہوئی آلام کی گرد
 
اپنی دو روزہ جوانی کی شکستوں کا شمار
چاندنی راتوں کا بے کار دہکتا ہوا درد
 
دل کی بے سود تڑپ جسم کی مایوس پکار
چند روز اور مری جان فقط چند ہی روز
Chand Roz Aur Meri Jaan Faqat Chand Hi Roz
apne ajdad ki miras hai mazur hain hum

jism par qaid hai jazbaat pe zanjiren hain
fikr mahbus hai guftar pe taziren hain

apni himmat hai ki hum phir bhi jiye jate hain
zindagi kya kisi muflis ki qaba hai jis mein

har ghaDi dard ke paiwand lage jate hain
lekin ab zulm ki miad ke din thoDe hain

ek zara sabr ki fariyaad ke din thoDe hain
arsa-e-dahr ki jhulsi hui virani mein

hum ko rahna hai pe yunhi to nahin rahna hai
ajnabi hathon ka be-nam giran-bar sitam

aaj sahna hai hamesha to nahin sahna hai
ye tere husn se lipTi hui aalam ki gard

apni do roza jawani ki shikaston ka shumar
chandni raaton ka bekar dahakta hua dard

dil ki be-sud taDap jism ki mayus pukar
chand roz aur meri jaan faqat chand hi roz
 

اپنا تبصرہ بھیجیں