Iss Bazam Mein Kia Koi Sune Raye Hamari

Iss Bazam Mein Kia Koi Sune Raye Hamari

Iss Bazam Mein Kia Koi Sune Raye Hamari
Yeh baat yeh awqat kahan haye hamari

Hum chahte kia hain nahi maloom kisi ko
Kis tarah tabiyat koi behlay hamari

Guzri hai jawani bari be rahroi mein
Aye kaash zaayifi bhi guzar jaye hamari

Uss shahr mein rehna hai bayaban mein rehna
Suraat nahi pehchante hamsaye hamari

Yeh ghar yeh gali zehin mein kar lejeye mehfooz
Mumkin hai kabhi aap ko yaad aaye hamari

Iss bazam mein kia koi sune raye hamari
Yeh baat yeh awqat kahan haye hamari
غزل
اِس بزم میں کیا کوئی سنے رائے ہماری
یہ بات یہ اوقات کہاں ہائے ہماری

ہم چاہتے کیا ہیں نہیں معلوم کسی کو
کس طرح طبعیت کوئی بہلائے ہماری

گزری ہے جوانی بڑی بے راہروی میں
اے کاش ضعیفی بھی گزر جائے ہماری

اُس شہر میں رہنا ہے بیابان میں رہنا
صورت نہیں پہچانتے ہمسائے ہماری

یہ گھر یہ گلی ذہن میں کر لیجئے محفوظ
ممکن ہے کبھی آپ کو یاد آئے ہماری

اِس بزم میں کیا کوئی سنے رائے ہماری
یہ بات یہ اوقات کہاں ہائے ہماری

اپنا تبصرہ بھیجیں