Aarzu Ke Musafir

آرزو کے مسافر:
جانے کس کی تلاش ان کی آنکھوں میں تھی
آرزو کے مسافر
بھٹکتے رہے
جتنا بھی وہ چلے
اتنے ہی بچھ گئے
راہ میں فاصلے
خواب منزل تھے
اور منزلیں خواب تھیں
راستوں سے نکلتے رہے راستے
جانے کس واسطے
آرزو کے مسافر بھٹکتے رہے
جن پہ سب چلتے ہیں
ایسے سب راستے چھوڑ کے
ایک انجان پگڈنڈی کی انگلی تھامے ہوئے
:Aarzu Ke Musafir
jaane kis ki talash un ki aankhon mein thi
aarzu ke musafir
bhatakte rahe
jitna bhi wo chale
itne hi bichh gae
rah mein fasle
khwab manzil the
aur manzilen khwab thin
raston se nikalte rahe raste
jaane kis waste
aarzu ke musafir bhatakte rahe
jin pe sab chalte hain
aise sab raste chhod ke
ek anjaan pagdandi ki ungli thame hue
ek sitare se
ummid bandhe hue samt ki

اپنا تبصرہ بھیجیں