Chaht Hoon Keh Nazar Noor Se Manoos Nah Ho

Chaht Hoon Keh Nazar Noor Se Manoos Nah Ho

Chaht Hoon Keh Nazar Noor Se Manoos Nah Ho
Roshni ho magar itni ho keh mehsoos nah ho

Kaisay khil paye yeh raasha hai keh bhonchal agar
Kamray ki chhat se latakta howa fanoos nah ho

Zindagi lambi to ho sakti hai be aant nahi
Khudkashi ki bhi sahoolat hai to mayoos nah ho

To dua kar keh mein roota rahon sahra nah banon
Khaak aur num ka tanasub kabhi maakoos nah ho

Jism ka aman sabotaz kaye rakhti hai
Rooh darasal samawaat ki jasoos nah ho

Koi aasaib bhi chheray nah meri tanhai
Aisa ghar dekh jo khali tu ho manhoos nah ho

Ab yeh zardi bhi bhugatna tu paray gi kuch din
Mein nah kehta tha haray rang mein malboos nah ho

Chaht hoon keh nazar noor se manoos nah ho
Roshni ho magar itni ho keh mehsoos nah ho
غزل
چاہتا ہوں کہ نظر نور سے مانوس نہ ہو
روشنی ہو، مگر اِتنی ہو کہ محسوس نہ ہو

کیسے کھل پائے ، یہ رعشہ ہے کہ بھونچال اگر
کمرے کی چھت سے لٹکتا ہوا فانوس نہ ہو

زندگی لمبی تو ہو سکتی ہے بے انت نہیں
خودکشی کی بھی سہولت ہے تو مایوس نہ ہو

تو دعا کر کہ میں روتا رہوں صحرا نہ بنوں
خاک اور نم کا تناسب کبھی معکوس نہ ہو

جسم کا امن سبوتاژ کئے رکھتی ہے
روح دراصل سماوات کی جاسوس نہ ہو

کوئی آسیب بھی چھیڑے نہ مری تنہائی
ایسا گھر دیکھ جو خالی تو ہو، منحوس نہ ہو

اب یہ زردی بھی بھگتنا تو پڑے گی کچھ دن
میں نہ کہتا تھا ہرے رنگ میں ملبوس نہ ہو

چاہتا ہوں کہ نظر نور سے مانوس نہ ہو
روشنی ہو، مگر اِتنی ہو کہ محسوس نہ ہو
Poet: Umair Najmi

اپنا تبصرہ بھیجیں