Teray Galy Mein Jo Banhon Ko Dal Rakhte Hain

نظم
ترے گلے میں جو بانہوں کو ڈال رکھتے ہیں
تجھے منانے کا کیسا کمال رکھتے ہیں

تجھے خبر ہے تجھے سوچنے کی خاطر ہم
بہت سے کام مقدر پہ ٹال رکھتے ہیں

کوئی بھی فیصلہ ہم سوچ کر نہیں کرتے
تمہارے نام کا سکہ اچھال رکھتے ہیں

تمہارے بعد یہ عادت سی ہو گئی اپنی
بکھرتے سوکھتے پتے سنبھال رکھتے ہیں

خوشی سی ملتی ہے خود کو اذیتیں دے کر
سو جان بوجھ کے دل کو نڈھال رکھتے ہیں

کبھی کبھی وہ مجھے ہنس کے دیکھ لیتے ہیں
کبھی کبھی مرا بے حد خیال رکھتے ہیں

تمہارے ہجر میں یہ حال ہو گیا اپنا
کسی کا خط ہو اسے بھی سنبھال رکھتے ہیں

خوشی ملے تو ترے بعد خوش نہیں ہوتے
ہم اپنی آنکھ میں ہر دم ملال رکھتے ہیں

زمانے بھر سے بچا کر وہ اپنے آنچل میں
مرے وجود کے ٹکڑے سنبھال رکھتے ہیں

کچھ اس لیے بھی تو بے حال ہو گئے ہم لوگ
تمہاری یاد کا بے حد خیال رکھتے ہیں


Nazam

Teray Galy Mein Jo Banhon Ko Dal Rakhte Hain
Tujhe manane ka kaisa kamal rakhte hain

Tujhe khabar hai tujhe sochne ki khatir hum
Bahut se kaam muqaddar pe tal rakhte hain

Koi bhi faisla hum soch kar nahin karte
Tumhaare nam ka sikka uchhaal rakhte hain

Tumhaare baad ye aadat si ho gai apni
Bikharte sukhte patte sambhaal rakhte hain

Khushi si milti hai khud ko aziyyaten de kar
So jaan-bujh ke dil ko nidhaal rakhte hain

Kabhi kabhi wo mujhe hans ke dekh lete hain
Kabhi kabhi mera behad khayal rakhte hain

Tumhaare hijr mein ye haal ho gaya apna
Kisi ka khat ho use bhi sambhaal rakhte hain

Khushi mile to tere baad khush nahin hote
Hum apni aankh mein har-dam malal rakhte hain

Zamane-bhar se bacha kar wo apne aanchal mein
Mere wajud ke tukde sambhaal rakhte hain

Kuchh is liye bhi to behaal ho gae hum log
Tumhaari yaad ka behad khayal rakhte hain

اپنا تبصرہ بھیجیں