Parai Aag Pe Roti Nahi Banaunga

پرائی آگ پہ روٹی نہیں بناؤں گا
میں بھیگ جاؤں گا چھتری نہیں بناؤں گا
اگر خدا نے بنانے کا اختیار دیا
علم بناؤں گا برچھی نہیں بناؤں گا
فریب دے کے ترا جسم جیت لوں لیکن
میں پیڑ کاٹ کے کشتی نہیں بناؤں گا
گلی سے کوئی بھی گزرے تو چونک اٹھتا ہوں
نئے مکان میں کھڑکی نہیں بناؤں گا
میں دشمنوں سے اگر جنگ جیت بھی جاؤں
تو ان کی عورتیں قیدی نہیں بناؤں گا
تمہیں پتا تو چلے بے زبان چیز کا دکھ
میں اب چراغ کی لو ہی نہیں بناؤں گا
میں ایک فلم بناؤں گا اپنے ثروتؔ پر
اور اس میں ریل کی پٹری نہیں بناؤں گا
Parai Aag Pe Roti Nahin Banaunga
main bhig jaunga chhatri nahin banaunga
 
agar khuda ne banane ka ikhtiyar diya
alam banaunga barchhi nahin banaunga
 
fareb de ke tera jism jit lun lekin
main ped kat ke kashti nahin banaunga
 
gali se koi bhi guzre to chaunk uthta hun
nae makan mein khidki nahin banaunga
 
main dushmanon se agar jang jit bhi jaun
to un ki aurten qaidi nahin banaunga
 
tumhein pata to chale be-zaban chiz ka dukh
main ab charagh ki lau hi nahin banaunga
 
main ek film banaunga apne ‘sarwat’ par
aur is mein rail ki patri nahin banaunga

اپنا تبصرہ بھیجیں