Izhaar

اظہار:
تجھے اظہار محبت سے اگر نفرت ہے
تو نے ہونٹوں کو لرزنے سے تو روکا ہوتا
بے نیازی سے مگر کانپتی آواز کے ساتھ
تو نے گھبرا کے مرا نام نہ پوچھا ہوتا
تیرے بس میں تھی اگر مشعل جذبات کی لو
تیرے رخسار میں گلزار نہ بھڑکا ہوتا
یوں تو مجھ سے ہوئیں صرف آب و ہوا کی باتیں
اپنے ٹوٹے ہوئے فقروں کو تو پرکھا ہوتا
یوں ہی بے وجہ ٹھٹکنے کی ضرورت کیا تھی
دم رخصت میں اگر یاد نہ آیا ہوتا
تیرا غماز بنا خود ترا انداز خرام
دل نہ سنبھلا تھا تو قدموں کو سنبھالا ہوتا
اپنے بدلے مری تصویر نظر آ جاتی
تو نے اس وقت اگر آئنہ دیکھا ہوتا
حوصلہ تجھ کو نہ تھا مجھ سے جدا ہونے کا
ورنہ کاجل تری آنکھوں میں نہ پھیلا ہوتا
:Izhaar
tujhe izhaar-e-mohabbat se agar nafrat hai
tu ne honton ko larazne se to roka hota

be-niyazi se magar kanpti aawaz ke sath
tu ne ghabra ke mera nam na puchha hota

tere bas mein thi agar mashal-e-jazbaat ki lau
tere rukhsar mein gulzar na bhadka hota

yun to mujh se huin sirf aab-o-hawa ki baaten
apne tute hue fiqron ko to parkha hota

yunhi be-wajh thitakne ki zarurat kya thi
dam-e-rukhsat main agar yaad na aaya hota

tera ghammaz bana khud tera andaz-e-khiram
dil na sambhla tha to qadmon ko sambhaala hota

apne badle meri taswir nazar aa jati
tu ne us waqt agar aaina dekha hota

hausla tujh ko na tha mujh se juda hone ka
warna kajal teri aankhon mein na phaila hota

اپنا تبصرہ بھیجیں