Mehsoos Howa Khud Peh To Hum Baant Rahe Hain

Mehsoos Howa Khud Peh To Hum Baant Rahe Hain

Mehsoos Howa Khud Peh To Hum Baant Rahe Hain
Sab ahl-e-mohabbat hain jo gham baant rahe hain

Tou aur kisi kaam farishton ko laga de
Maalik meri basti mein alm baant rahe hain

Har simt dua hai keh mehak jayen fizayen
Kuch phool hain jo aakhir dam baant rahe hain

Lafzon ko haqaarat se nah dekho keh sukhan mein
Umeed hai jo ahl-e-qalam bant rahe hain

Daryaon ki yeh darya dili theek nahi hai
Jo khasta makanon mein bhi num baant rahe hain

Imdaad ghareebon ke liye lay thay hakim
Ab baith ke hujray mein raqam baant rahe hain

Mehsoos howa khud peh to hum baant rahe hain
Sab ahl-e-mohabbat hain jo gham baant rahe hain
غزل
محسوس ہوا خود پہ تو ہم بانٹ رہے ہیں
سب اہلِ محبت ہیں جو غم بانٹ رہے ہیں

تو اور کسی کام فرشتوں کو لگادے
مالک مری بستی میں الم بانٹ رہے ہیں

ہر سمت دعا ہے کہ مہک جائیں فضائیں
کچھ پھول ہیں جو آخر دم بانٹ رہے ہیں

لفظوں کو حقارت سے نہ دیکھو کہ سخن میں
اُمید ہے جو اہلِ قلم بانٹ رہے ہیں

دریاؤں کی یہ دریا دلی ٹھیک نہیں ہے
جو خستہ مکانوں میں بھی نم بانٹ رہے ہیں

امداد غریبوں کیلئے لائے تھے حاکم
اب بیٹھ کے حجرے میں رقم بانٹ رہے ہیں

محسوس ہوا خود پہ تو ہم بانٹ رہے ہیں
سب اہلِ محبت ہیں جو غم بانٹ رہے ہیں
Poet: Komal Joya

اپنا تبصرہ بھیجیں